The Latest

وحدت نیوز (لاہور)  مجلس وحدت مسلمین کے صوبائی سیکرٹریٹ لاہور میں ایم ڈبلبیو ایم کے مرکزی و صوبائی رہنماوں کا اہلسنت علماءو مشائخ اور سول سوسائٹی کے رہنماوں کے ہمراہ مقبوضہ بیت المقدس پر صہیونی قابض دہشتگرد ریاست اسرائیل اور اس کے پشت پناہی کرنے والا شیطانی ریاست امریکہ کی جانب سے مظلوم فلسطینی مسلمانوں کے قتل عام کیخلاف مشترکہ پریس کانفرنس کا انعقاد ہو ا جس میںسید ناصر عباس شیرازی مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین پاکستان ،سید اسد عباس نقوی مرکزی سیکرٹری سیاسیات مجلس وحدت مسلمین پاکستان ، علامہ سید مبارک علی موسوی سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین پاکستان پنجاب ، علامہ سید حسن رضا ہمدانی سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین ضلع لاہور،علامہ ابو ذر مہدوی پرنسپل جامعہ قرآن ناطق لاہور،عبداللہ ملک رہنماءسول سوسائٹی ، پیر معصوم شاہ نقوی سربراہ جمعیت علماءپاکستان ،ڈاکٹر امجد چشتی  جمعیت علماءپاکستان ،پیر اختر رسول قادری صوبائی صدر جمعیت علماءپاکستان،ڈاکٹر پروفیسر شبیر انجم صوبائی رہنماہ جمعیت علماءپاکستان،صوبائی رہنماءمجلس وحدت مسلمین رائے ناصر علی ، رانا ماجد علی نے پریس کانفرنس میں شرکت کی۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مقررین کا کہنا تھا کہ مقبوضہ بیت المقدس میں عالمی دہشتگرد اسرائیل و امریکہ نے اپنے نا کام عزائم کی تکمیل کے لئے یرو شیلم کو اسرائیل کا دارالخلافہ قرار دے کر مسلمانان عالم کے قلب پر وار کیا ہے ۔ ہم اس ظلم و بر بریت کے خلاف ہرگز خاموش نہیں رہیں گے ۔ صیہونی حکومت نے امریکہ کی ایماءپر غزہ کی سر زمین پر مظلوم فلسطینیوں کے خون سے حولی کھیلی ہے ۔ دنیا میں ایک بار پھر ان عالمی دہشتگردوں امریکہ اور اسرائیل نے ظلم و بربریت کی نئی تاریخ رقم کی ہے ۔ ہم مسلم اُمہ خصوصاً عرب کے دولت اور اقتدا ر کے نشے میں مست حکمرانوں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ فوری طور پر امریکہ و اسرائیل کے خلاف عملی اقدامات اُٹھاتے ہوئے مکمل بائیکاٹ کر ے او ر مظلوم فلسطینوں کے خون کے ایک ایک قطرے کا حساب لے ۔

مقررین نےکہاکہ آل سعود عالم اسلام پر واضح کرے کہ وہ مسلمانان عالم کے ساتھ ہے یا امریکہ و اسرائیل کے غلام ہیں ۔ ہم تمام عالم اسلام کے حکمرانوں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ او ائی سی کے اجلاس میں امریکہ سے اپنی راہیں جدا کرنے کا اعلان کریں ۔ قبلہ اول کی آزادی کے لئے ہم ہر قسم کی قربانی دینے کے لئے تیار ہیں ۔ اور یہ ہمارے ایمان کا حصہ ہے ۔ اس ظلم اور زیادتی پر اقوام متحدہ کا روائتی بیان نہایت قابل افسوس اور قابل مذمت ہے ۔ اقوام متحدہ چند استعماری طاقتوں کا آلہ کار بنا ہواہے اور اپنے فرائض کی انجام دہی کے حوالے سے غیر موثر ہو گیا ہے ۔اقوام عالم کو چاہئے اس حساس مسئلے پر روائتی خاموشی سے کام نہ لیں ،امریکہ اسرائیل اور ہندوستان عالمی امن کے دشمن اور مسلمانوں کے قاتل ممالک ہیں،ان کیخلاف دنیا کے امن پسند ممالک کو سامنے آنا ہوگا۔

وحدت نیوز (لاہور)  مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے صوبائی ڈپٹی سیکرٹری جنرل ڈاکٹر افتخار نقوی کا نواز شریف کے ملک دشمنی میں دیے گئے انٹرویو پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہنا تھا کہ نواز شریف کا اصل چہرہ آج پوری طرح قوم کے سامنے ہے، اپنی سیاہ کاریاں بچانے کے لیے نواز شریف نہ صرف فوج، نیب اور سپریم کورٹ جیسے ریاستی ادارے تباہ کرنے پر بضد ہیں بلکہ یہ پاکستان کے مستقبل سے کھلواڑ پر اترآئے ہیں۔ نوازشریف اس وقت پاکستان مخالف قوتوں کے ہاتھوں میں کھیل رہے ہیں، اور اپنی ذات کو بچانے کے لیے یہ شخص ملکی اداروں کو بدنا کر رہا ہے جس پر قومی سلامتی کے اداروں کو فوری نوٹس لینا چاہیے۔ ڈاکٹر افتخار نقوی نے مطالبہ کیا کہ نواز شریف کے ملک دشمن اس بیان پر قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس بلایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ نوازشریف کے بیان کامقصداداروں پردباؤڈالناتھا۔ ڈاکٹر افتخار نقوی کا مزید کہنا تھا کہ نواز شریف قوم کو بتائیں کہ انہوں نے اپنے 4 سالہ دورِ وزارت عظمیٰ کے دوران زبان کیوں نہیں کھولی اور کیوں کوئی کارروائی نہیں کی۔ جبکہ نواز شریف کے اس غلط بیان ملک دشمن ادارے اور صحافتی تنظیمیں فائدہ اٹھا رہی ہیں۔

وحدت نیوز(گلگت) امریکہ صرف مسلمانوں کا ہی دشمن نہیں بلکہ عالم انسانیت کا دشمن ہے۔امریکہ اور اس کے اتحادی عالمی معیشت پر اپنی اجارہ داری قائم رکھنے کیلئے اب تک لاکھوں انسانوں کا خون بہا چکے ہیں۔امریکہ ،اسرائیل اور ہندوستان اس زمانے کے فرعون،نمرود اور یزید ہیں ان ظالم حکومتوں کے خلاف آواز بلند کرناجہاد اکبر ہے۔مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سیکرٹری جنرل علامہ ناصر عباس جعفری کے اعلان پر گلگت میں یوم مردہ باد امریکہ ریلی نکالی گئی جو وحدت ہاؤس سے کیپٹن ضمیر عباس چوک پر اختتام پذیر ہوئی۔ریلی کے شرکاء سے شیخ نیئر عباس مصطفوی، شیخ مجتبیٰ حسین اور امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن گلگت ڈویژن کے صدر برادر عارف حسین الجانی نے خطاب کیا۔علامہ نیئر عباس مصطفوی نے اپنے خطاب میں کہا کہ امریکہ اور ا س کے اتحادی اسرائیل اور ہندوستان کے عالم انسانیت کے خطرہ ہیں۔ارض فلسطین، کشمیر، عراق، شام، یمن،پاکستان اور افغانستان میں اپنے حمایتی دہشت گرد تنظیموں کے ذریعے معصوم انسانوں کا خون بہارہے ہیں اور دنیا میں جتنی دہشت گرد تنظیمیں ہیں ان سب کی پشت پناہی اور سرپرستی امریکہ ،اسرائیل اور ہندوستان کررہے ہیں۔امریکہ جہاں پوری دنیا پر حکمرانی کا خواب دیکھ رہا ہے وہی مسلمانوں کو اپنے مد مقابل سمجھتا ہے اور سازشوں کے ذریعے مسلمانوں کی طاقت کو پارہ پارہ کرنے کی مذموم کوششوں میں مصروف ہے۔انہوں نے کہا کہ امریکہ کے ناپاک عزائم کے سامنے ہم سیسہ پلائی دیوار ثابت ہونگے اور طاغوتی طاقتوں کے آگے ہرگز تسلیم خم نہیں ہونگے۔ امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن گلگت ڈویژن کے صدر جناب عارف الجانی نے اپنے خطاب میں کہا کہ امریکہ کی پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت ناقابل فہم اور ناقابل برداشت ہے۔پاکستان ایک آزاد ملک ہے اور اپنے معاملات میں کسی کی ڈکٹیشن کا محتاج نہیں۔انہوں نے کہا کہ کشمیر، فلسطین، شام ،یمن اور پاکستان میں دہشت گرد عناصر اور قوتیں امریکی سرپرستی میں کام کررہی ہیں ۔یہ امریکہ ہی ہے جس نے داعش جیسی خونخوار تنظیم کو وجود بخشا ۔آج وقت کا تقاضا ہے کہ امریکی دھمکیوں کا خود اسی کی زبان میں منہ توڑ جواب دیا جائے۔

وحدت نیوز(اسلام آباد)  مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مختارامامی نے ایم ڈبلیوایم کے مرکزی سیکریٹری جنرل قائد وحدت علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کی اپیل پر ملک بھر میں یوم مردہ باد امریکہ اسرائیل وہندوستان کی کامیاب ریلیاں نکالنے پر تمام مرکزی ،صوبائی وضلعی عہدیداران کا تہہ دل سے شکریہ اداکرتے ہوئے کہاہے کہ ہم خصوصاً ان تمام دینی وسیاسی تنظیموںاور سیاسی شخصیات  کے شکر گزار ہیں جن کا تعاون کامیاب ریلیوں کے انعقاد میں معاون ثابت ہوا۔قانون نافذ کرنے والے اداروں کا بھی شکریہ جن کےتعاون سے پورے ملک میں پر امن طور پر یوم مردہ باد امریکہ ریلیوں کا انعقاد ممکن ہوا ۔

عراقی الیکشن اور مرجعیت کا موقف

وحدت نیوز (آرٹیکل)  عراق قدرتی وسائل سے مالا مال ملک ہے اور تقریبا دو تھائی آبادی شیعوں پر مشتمل ہے. اور یہاں کا حوزہ علمیہ تاریخ شیعہ کا قدیم ترین حوزہ علمیہ ہے. مرجعیت اور حوزہ علمیہ کا اس ملک میں ایک خاص مقام ہے. جب ماضی میں حوزہ علمیہ اور مرجعیت نے اجتماعی اور سیاسی میدان سے خود کو لا تعلق کیا اور میدان دوسروں کے لئے چھوڑ دیا تو اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ کیمونسٹ بعث پارٹی نے اقتدار سنبھال کر اور 35 سال تک حکومت کی اور پھر عراقی شیعوں کر 24 سال صدام جیسے ظالم وجابر ڈکٹیٹر کے اقتدار کو برداشت کرنا پڑاکہ جس کے انسانیت سوز جرائم ، قتل وشکنجوں اور مقدسات اسلام واھل بیت علیہم السلام کی بیحرمتی کی ایک لمبی داستان ہے.جب 2003 میں صدام کی حکومت کا خاتمہ ھوا اور امریکہ اس ملک پر اپنے وائسرائے بول بریمر کے ذریعے قابض ہوا تو مرجعیت رشیدہ نے بیداری کا ثبوت دیتے ہوا ملک وعوام کے وسیع تر مفادات کی خاطر اقوام متحدہ اور ناجائز قابض انتظامیہ پر زور ڈالا کہ عراق کے مستقبل کا فیصلہ فقط اور فقط عراقیوں کو کرنے دیا جائے اور جلد از جلد انتخابات کرائے جائیںتاکہ عوام کے منتخب نمائندے اس ملک کا نظم ونظام از سر نو ترتیب دے سکیں اور اس طرح ڈکٹیٹرشپ کا راستہ آئین اور جمہوری نظام کے ذریعے روکا جاسکے اور فقط انتخابات اور عوامی نمائندگان کے ذریعے حکومت چلانے کی بات ہی نہیں کی بلکہ عملی طور پر گذشتہ انتخابات میں نجف اشرف کے بزرگ مراجع عظام خود بھی ووٹ ڈالنے کیلئے لئے انتخابی مراکز پر تشریف لائے ہیں. جن کی تصاویر میڈیا نشر ہوئیں تھیںاور ہر مشکل گھڑی میں مرجعیت ہمیں میدان میں نظر آئی ہےاور اس نے اس ملک کے قائدین اور عوام کی بروقت راھنمائی کی ہے اور اس ملک کو بڑے بڑے بحرانوں سے نکالنے میں اہم کردار ادا کیا ہے.جب داعش کو عراق پر مسلط کیا گیا اور موصل پر قبضے کے بعد یہ تیزی سے بغداد ،نجف اشرف ، کربلا معلی اور دیگر علاقوں کی طرف بڑھ رہے تھے . تو اس وقت اسی مرجعیت کے تاریخی فتوے سے ملک عراق ، عراقی عوام اور مقدسات کے دفاع کے لئے عراقی عوام پر مشتمل ایک حشد الشعبی کے نام سے ایک فورس بنی ، جس نے اس تکفیری فتنے سے سرزمین عراق کو پاک کرنے میں بنیادی کردار ادا کیااور آج جب داعشی فکر کے حامل عناصر کو سیاسی لباس پہنا کر پارلیمنت جیسے اعلی اختیاراتی ادارے میں داخل کرنے کی کوشش کی جاری ہے. مرجعیت نے عراقی عوام اور سیاستدانوں کو اپنے حکیمانہ بیان سے خبردار کیا ہے اور انتخابی سیاست کے سنہری اصول بھی بتائے ہیں. اس بیان کا مکمل ترجمہ پیش خدمت ہے.

عراقی پارلیمانی الیکشن سے متعلق دفتر آیت اللہ العظمی سید علی سیستانی (دام ظلہ) کا بیان

 بسم اللہ الرحمن الرحیم الیکشن کی تاریخ نزدیک آنے پر بڑی تعداد میں عراقی شہری مرجعیت کا موقف جاننا چاہتے ہیں. کیونکہ یہ ایک اہم سیاسی اقدام ہے اس لئے ضروری ہے کہ تیں امور کو یہاں بیان کیا جائے.

1- انتخابات کا راستہ ہی حال اور مستقبل میں صحیح اور مناسب ترین راستہ ہے.

ظالمانہ نظام کے سقوط سے ہی مرجعیت نے کوشش کی کہ اس فاسد نظان کی جگہ ایک متعدد اقطاب سیاسی نظام اسکی جگہ حاصل کر لے. اور انتخابی صنادیق اور ووٹنگ کے ذریعے پر امن سسٹم کو چلایا جائے اور شفاف انتخابات اپنے طے شدہ وقت پر ہوں. اور اس ایمان ویقین کے ساتھ کہ یہی وہ تنہا راستہ ہے کہ جس میں عوام کی حریت وآزادی ، عزت وکرامت اور ترقی وخوشحالی کی ضمانت ہے . اور اسی کے ذریعے ہی اعلی اقدار اور عالی مفادات کی حفاظت ہو سکتی ہے.اسی لئے تو دینی مرجعیت نے ناجائز قابض نظام اور اقوام متحدہ پر زور دیا تھا کہ جلد از جلد انتخابات کروا کر عراقیوں کو اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا موقع دیا جائے. تاکہ وہ اپنے نمائندگان کو منتخب کر سکیں جن کے پاس مستقل دستور بنانے اور حکومت کرنے کے لئے نمائندگان اختیار کرنے کا اختیار ہو.آج 15 سال کا عرصہ گزر جانے کے بعد بھی مرجعیت اپنی رائے پر قائم ہےکہ بنیادی اور اصولی طور پر یہ اسلوب اور راستہ ،یعنی انتخابات کا راستہ ہی حال اور مستقبل میں صحیح اور مناسب راستہ ہےاور ضروری ہے کہ انفرادی اور استبدادی اقتدار کا راستہ روکا جائے خواہ اسکا جو بھی بہانہ اور عنوان وہ  تلاش کریںاور یہ بھی واضح رہے کہ انتخابی راستہ اس وقت تک مطلوبہ نتائج نہیں دے سکتا جبتک اس میں یہ مندرجہ ذیل شرائط نہ پائی جائیں ۔

* انتخابی دستور اور قانون عادلانہ ہو. جس میں ووٹ کا احترام کیا جائے. اور نتائج میں ھیرا پھیری کا راستہ روکا جائے.

 * انتخابی الائنسسز کے مابین اقتصادی ومعاشی ، تعلیمی اور خدمات کے عناوین کے تحت مقابلہ ہونا چاہیے اور قومی و طائفی حساسیت اور منفی پروپیگنڈے سے بچا جائے.

 * انتخابی امور میں ہر قسم کی بیرونی مداخلت خواہ وہ مالی سپورٹ ہو یا کوئی اور اسکو روکا جائے. اور خلاف ورزی پر سخت سزائیں رکھی  جائیں.
 
* لوگوں کو بھی اپنے ووٹ کی قیمت کی قدر کرنی چاہیئے. اور ملک کے مستقبل میں اس ووٹ کے کردار کا انہیں شعور ہونا چاہیئے. نا اھل لوگوں کو سستے داموں ، اپنی نفسانی خواھشات وجذبات ، ذاتی و انفرادی مفادات اور قبیلے کے تعصب کی بنیاد پر ووٹ نہ دیں.

ماضی کے انتخابات میں جو کمزوریاں اور خامیاں نظر آئیں اس کا سبب منتخب افراد اور جو حکومتی اعلی مراتب پر فائز ہوئے وہ تھے انھوں نے اپنے اختیارات اور مناصب وعہدوں کا ناجائز استعمال کیا  تھا. انھیں کی وجہ سے کرپشن پھیلی اور اموال عامہ کو ضائع کیا گیا جس کی ماضی میں بھی مثال نہیں ملتی. اپنے لئے بہت زیادہ تنخواہیں مقرر کی گئيں اور اپنے منصبی واجبات کی ادائیگی اور عوام کی خدمت میں نا کام رہےاور
انہیں باعزت زندگی گزارے کا حق نہ دے سکےاور اس سبب ضروری شرائط کا فقدان تھا اور گذشتہ انتخابات میں کافی حد تک اس کا لحاظ نہیں رکھا گیا اور اس موجودہ انتخابات میں بھی اس کا کسی نہ کسی طریقے انہیں شرائط کا فقدان اسی تسلسل سے نظر آ رہا ھے. لیکن امید کی جاتی ہے کہ راستہ درست کر لیا جائے گا . اور غیرتمند فرزندان وطن کی محنت اور کوشش سے حکومتی اداروں میں اصلاحات کی جائیں گی . اور اس مقصد کے حصول کے لئے ہر ممکنہ آئینی راستہ اختیار کیا جائے گا۔

 .2-  انتخابات میں شرکت کی اہمیت

ا نتخابات میں شرکت کرنا ہر اس شہری کا حق ہے جس میں قانون کے مطابق ساری شرائط پائی جائیں. اور اس حق کے استعمال میں اسے کوئی مجبور بھی نہیں کر سکتا. ماسوائے یہ کہ وہ خود اپنے وطن کی عوام اور اپنے ملک کے بلند اور عالی مصلحتوں اور مفادات کی ضرورت کو مد نظر رکھتے ہوئے اس بات کا قائل ہو. اور اسے اس بات کی طرف بھی توجہ دینی چاہیے کہ اگر وہ اپنا یہ حق استعمال نہیں کرے گا ، تو وہ پھر ان لوگوں کو پارلیمنٹ میں زیادہ نشستیں حاصل کرنے کا موقع فراہم کرے گا جنکی توجہ ملک وعوام کے مفادات اور اعلی مصلحتوں  سے بہت دور ہو. لیکن پھر بھی شرکت کرنے یا نہ کرنے کا اختیار تنہا اسی ووٹر کے پاس ہے.اور وہ ہی اس کا زمہ دار ہے. اور اسے چاہیئے کہ وہ مکمل ہوشمندی اور اپنے ملک اور اسکی عوام کے وسیع تر مفادات کو نہایت حد تک ملحوظ خاطر رکھے.

3-  مرجعیت دینی سب امیدواروں کے ساتھ برابر فاصلے پر ہے.

مرجعیت دینی اس بات کی تاکید کرتی ہے کہ وہ سب امیدواروں کے ساتھ برابر فاصلے پر ہے.اور اسی طرح سب انتخابی الائنسوں کے لئے بھی یہی موقف ہے. اور اس کا مطلب یہ ہے کہ کسی خاص شخص ، گروہ یا الائنس کو سپورٹ نہیں کرتی. اور ووٹ دینے والوں کی صوابدید پر ہے. کہ پوری دقت کے ساتھ کس کو ووٹ ڈالتے ہیں. ووٹرز کسی شخص اور پارٹی کو اپنے انتخابی مقاصد  کے حصول کے لئے مرجعیت یا کسی اور مقدس عنوان سے سو استفادہ نہ کرنے دیں جس کا ساری عراقی عوام کے دلوں میں احترام ہے . تاکید اور یادھانی کرائی جاتی ہے کہ امیدوار کی اھلیت وصلاحیت ، بےبداغ ماضی ، اقدار و اصولوں کی پاسداری اور بیرونی ایجنڈوں سے دوری جیسے اصولوں کا خیال رکھا جائے. اور جس امیدوار میں وطن اور عوام کی خدمت کی خاطر قربانی کا جذبہ ، پروگراموں کے اجراء کی صلاحیت اور قدیمی مشکلات اور بحرانون سے نکالنے کی صلاحیت ہو اسے منتخب کیا جائےاور مزید تاکید یہ ہے کہ ووٹرز کو  امیدواروں اور الائنسوں کے سربراھان کی سیاسی جہت اور اھداف کا علم ہونا چاہیئے . بالخصوص انکا جو پہلے سابقہ انتخابات میں زمہ دار رہ چکے ہیں. تاکہ دھوکہ باز ، کرپٹ اور ناکام افراد کے پھندوں اور جال سے بچا جا سکے، جنہیں پہلے آزمایا جا چکا ہے یا نہیں. اللہ تعالیٰ العلی القدیر سے دعا گو ہیں کہ جس میں ملک کی بہتری اور عوام کی بھلائی ہے اس میں سب کی مدد کرے .
 "انه ولي ذلك وھو ارحم الراحمین"

مکتب السید سیستانی (دام ظلہ)
النجف الاشرف.

 17 شعبان 1439 ھ بمطابق  4/5/2018 ء


تحریر وترجمہ:  ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی
وحدت نیوز / اقبال ریسرچ سینٹر

وحدت نیوز(سکھر) شیطان بزرگ امریکہ اور اس کےاتحادی بھارت کی امریکی پشت پناہی،امریکی صدر کی پاکستان کو سنگین دھمکیوں اور بیت المقدس میں امریکی سفارت خانہ منتقلی و اسرائیلی جارحیت کے خلاف قائد وحدت ناصر ملت علامہ راجہ ناصر عباس جعفری حفظہ اللہ کے اعلان پر ملک بھر کی طرح ضلع سکھر میں بھی یوم مردہ باد امریکہ اسرائیل و ہندوستان ریلی نکالی گئی جس میں دیگر تنظیموں کے کارکنان، غیور عوام سمیت خواتین و بچوں نے بھی کثیر تعداد مین شرکت کی،ریلی سے مرکزی ڈپٹی سیکریٹری جنرل علامہ احمد اقبال رضوی،مرکزی صدر امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائیزیشن برادر انصر مہدی،صوبائی سیکریٹری جنرل مولانا مقصود ڈومکی،ضلعی سیکریٹری جنرل برادر چودری اظھر حسن سمیت اصغریہ اسٹوڈنٹس آرگنائیزیشن و دیگر تنظیموں و انجمنوں کے عھدیداروں نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ مسلمان ممالک پر ظالمانہ رویہ بند کرے فلسطین شام اور مسلمانوں کا قبلہ اول بیت المقدس میں امریکی سفارت خانہ بنانے کی کوشیش اور وطن عزیز پاکستان کو امریکی صدر کی جانب سنگین دھمکیوں کا سامنابھارت کی پشت پناہی نہ قابل برداشت ہے۔

وحدت نیوز(قمبر) عالمی دہشتگرد آمریکا ، اسرائیل اور ھندستان کے امت مسلمہ پر ڈہائے ہوئے مظالم اور مسلم ممالک کو دھمکانے کے خلاف مجلس وحدت مسلمین پاکستان تحصیل نصیرآباد اور اصغریہ اسٹوڈنٹس آرگنائیزیشن پاکستان یونٹ نصیرآباد کی جانب سے وارھ بس اسٹینڈ سے پریس کلب تک احتجاجی ریلی اور پریس کلب کے سامنے دھرنا ۔ تفصیل کے مطابق پورے پاکستان کی طرح آج نصیرآباد میں بھی مجلس وحدت مسلمین پاکستان تحصیل نصیرآباد اور اصغریہ اسٹوڈنٹس آرگنائیزیشن پاکستان کی مرکزی کال پر آمریکا و اسرائیل اور ھندستان کی جانب سے مسلم ممالک پر ظالمانہ جارحیت کے خلاف  وارھ بس اسٹینڈ سے پریس کلب تک احتجاجی ریلی نکالی گئی ، ریلی کے شرکاءکے ہاتھوں بینر اور پلے کارڈ اٹھائے ہوئے تھے جس پر مردہ باد امریکا ، مردہ باد اسرائیل اور مردہ باد ھندستان کے نعرے درج تھے ، ریلی کی قیادت ایم ڈبلیو ایم کے ضلعی سیکریٹری جنرل زوار حُبدار علی لغاری ، مولانا علی حسن جتوئی، سید اختر عباس نقوی ، اصغریہ اسٹوڈنٹس ضلعی رہنما نعیم علی بھٹی ، عامر علی نوناری ، نثار حسین جھتیال اور دوسرے رہنما کر رہے تھے ،

ریلی کے شرکا سے رہنمائوں نے خطاب کرتے ہوئے کہا کے ، عالمی دہشتگرد آمریکا ، اسرائیل اور ھندستان مسلم امت کے لئے ناسور بن چکے ہیں ،جو کہ پورے عالم اسلام میں دہشتگردی پھیلارہے ہیں ، شام ، عراق ، بحرین ، یمن ، فلسطین ، یروشلم ، کشمیر، برما ، افغانستان اور پاکستان میں ہر آئے دن بے گناہ انسانوں کو خون بہایا جا رہا ہے ، جس کے ذمیوار یہ دہشتگرد ملک ہیں ،اسرئیلی یہودی آج بھی قبلہ اول بیت المقدس مسجد اقصیٰ کی بی حرمتی کر رہے ہیں ،رہنمائوں نے مزید خطاب کرتے ہوئے کہا کے ظالم و دہشگرد آمریکا و اسرائیل اور ہندستان کی نابودی تک ہم چین سے نہیں بیٹھے گیں اور ہماری یہ عالمی تحریک جاری رہیگی ، آخر میں آمریکا  واسرائیل کے جھنڈےاور دہشتگرد ٹرمپ کا پتلا جلایا گیا ۔ 

وحدت نیوز(کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین کے رہنمااوروزیر قانون بلوچستان آغاسید محمد رضا کی کوششوں سے زائرین کیلئے کوئٹہ میں نئے کمپلیکس اور تفتان بارڈرپر پاکستان ہائوس کی توسیع کیلئے مجموعی 400ملین روپے کی منظوری دیدی گئی ہے، تفصیلات کے مطابق بلوچستان کی صوبائی حکومت نے مالی بجٹ سال 2018-19میں آغا رضا کی سفارش پر زائرین مقامات مقدسہ کی مشکلات کے پیش نظر کوئٹہ میں ایک نئے کشادہ اور سیع وعریض زائرین کمپلیکس کی تعمیر کیلئے 300ملین اور تفتان میں گذشتہ سال تعمیر ہونے والے  پاکستان ہائوس کی توسیع کیلئے 100ملین روپے کے فنڈز کی منظوری دیدی ہے،آغا رضا نے وحدت نیوزسے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ کوئٹہ میں تعمیر ہونے والا کمپلیکس جدید سہولیات سے آراستہ ہوگا، جس میں ہزاروں زائرین کے قیام و طعام کے انتظام سمیت وسیع وعریض پارکنگ ایریا ، مارکیٹ ، مسجد ودیگر سہولیات ایک ہی چھٹ تلے دستیاب ہوں گی، جہاں سکیورٹی کا بھی موثر انتظام ہوگا، ساتھ ہی انہوں نے بتایا کہ سابقہ حکومت کی جانب سے میری گذارش پر تفتان بارڈر پر گذشتہ برس قائم ہونے والے پاکستان ہائوس کی توسیع کیلئے بھی 100ملین روپے کے مزید فنڈز کی منظوری سےدیدی گئی ہے، جس کے نتیجے میں زائرین کربلا ومشہد کو درپیش مشکلات کے تدارک ممکن ہوسکے گا۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کوئٹہ ڈویژن کے زیر اہتمام امریکہ مردہ باد ریلی نکالی گئی جسمیں محب وطن ہزارہ قوم کے مرد و خواتین کی بڑی تعداد نے شرکت کی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی رہنماعلامہ ہاشم موسوی نے کہا کہ شام و عراق سے شکست کے بعد امریکہ اپنے قیمتی سرمائے داعش کو پاکستان کے بارڈروں پر منتقل کر رہا ہے  دوسری طرف این جی اوز سپورٹڈ  احتجاجات شروع کیا گیا ہے جسکے مطالبات واضح نہیں جس سے یہی لگتا ہے کہ ملک میں انارکی پھیلا کر داعش کا راستہ ہموار کرنے کی کو ششیں کی جا رہی ہیں جیسا کہ شام میں بھی یہی ہوا تھا۔

انہوںنے کہاکہ گزشتہ چالیس سالہ امپورٹڈ پالیسیوں کی آڑ میں اداروں کے خلاف نفرت آمیز تقاریر اور نعرے اسوقت لگائے جا رہے ہیں جب اداروں نے امریکہ کے ڈومور کے حکم کو مسترد کرتے ہوئے نومور کہنے کی جرات کی، یہ نفرت آمیز نعرے اسوقت کیوں نہیں لگائے گئے ادارے ڈومور پالیسی پر عمل پیرا تھے۔ اسوقت سب نے خاموشی اختیار کی ہوئی تھی جب ہم ظالمانہ امپورٹڈ پالیسیوں کے خلاف آواز اٹھا رہے تھے  اور اب جبکہ فنڈذ کے بدلے امریکی پالیسیاں امپورٹ کرنا بند ہو رہی ہیں اور ادارے اور سیاسی قیادت آزاد خارجہ و داخلہ پالیسیوں کی قدم بڑھا رہے ہیں دوسری طرف سی پیک منصوبہ کامیابی کی طرف بڑھ رہی ہے ایسے وقت میں ملک میں انارکی پھیلانا، عوام اور اداروں کو ایک دوسرے کے مدمقابل کھڑا کرنا وطن عزیز اور عوام کے مفاد میں نہیں ہیں  امریکہ اور امریکن لابی اداروں کو نو مور کی گستاخی کی سزا دینا چاہتی ہیں۔ عوام کو بیدار رہنے کی ضرورت ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان سمیت پورے خطے میں دہشت گردی اصل میں امریکی غلامی کا نتیجہ تھا او نجات کا واحد راستہ بھی امریکن بلاک سے نکلنا، امداد کے بدلے امریکہ سے پالیسی امپورٹ نہ کرنا اور آزاد خارجہ پالیسی بنانا ہی ہے۔ اسوقت امریکن لابی اور انکے ہاتھوں کچھ فریب خوردہ جذباتی افراد امریکہ کے خلاف عوامی نفرت اور جذبات کے رخ کو اپنے آدھے سچ پر مشتمل بے جا نعروں، تقریروں اور تحریروں کے ذریعے دوسری طرف موڑنے کی کوشش کر رہے ہیں کیا ایسے افراد خود شاہ سے شاہ کے وفادار نہیں امریکہ خود خطے میں اپنے ناپاک دہشت گردانہ عزائم کا اعتراف کر چکا ہے لیکن انکے مزدور انہیں بری الذمہ قرار دینے کی خاطر اداروں کے خلاف نفرت پھیلانے میں مصروف ہیں۔ انہوں نے تمام محب وطن عوام پر زور دیا کہ متحد ہوکر اداروں کو مجبور کریں کہ وہ امریکی غلامی کو مسترد کرتے ہوئے امریکن بلاک سے مکمل طور پر علحیدہ ہو جائے اور وطن عزیز کو دہشت گردی سے نجات دلائیں۔

وحدت نیوز (پشاور)  مجلس وحدت مسلمین کے قائد علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کے حکم پر ملک بھرکی طرح پشاور میں بھی یوم مردہ باد امریکا کے سلسلے میں احتجاج پریس کلب پشاور کے سامنے کیا گیا ۔جس میں کثیرتعداد میں شرکاء نے شرکت کی۔خیبر پختونخوا کے صوبائی سیکرٹری جنرل علامہ اقبال بہشتی نے اس احتجاج کی قیادت کی۔ شرکائے احتجاج نے بینرز، پلے کارڈز اور پارٹی جھنڈے اٹھارکھے تھے اور وہ مسلسل امریکا مردہ باد، اسرائیل مردہ باد کے نعرے لگارہے تھے۔

 یاد رہے کہ ایم ڈبلیو ایم کے قائد کی اپیل پر پاکستان بھر میں اتوار کے روز یوم مردہ باد امریکا منایا گیا۔ اس موقع پر صوبائی سیکرٹری  جنرل علامہ اقبال بہشتی  نے یوم مردہ باد امریکا کی مناسبت سے بتایا کہ یونائٹڈ اسٹیٹس آف امریکا عالمی  ہے جو دیگر ممالک اور خاص طور پر مسلمان و عرب ممالک اور تیسری دنیا کے ممالک میں مداخلت کی ایک طویل تاریخ رکھتا ہے۔انکا کہنا تھا کہ پوری دنیا میں جنگوں کی آگ بھڑکانے میں ، بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے اسلحے کی تیاری اور فروخت میں، دہشت گردوں کے ذریعے عدم استحکام اور قتل عام میں امریکی حکومتیں اور اس کے ادارے ہی ملوث ہیں ۔

 انہوں نے کہا کہ پوری دنیا نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں فیصلہ سنادیا کہ مقبوضہ یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت مان لینے کا اور وہاں اپنا سفارتخانہ منتقل کرنے کا امریکی حکومتی فیصلہ ناجائز و غیر قانونی ہے لیکن اس کے باوجود پوری دنیا کی رائے کو پاں تلے روندتے ہوئے ٹرمپ حکومت اپنے اس انسانیت دشمن، اسلام دشمن، عرب دشمن فیصلے پر ڈھٹائی سے قائم ہے۔ علامہ اقبال بہشتی نے کہا کہ ماضی میں بھی امریکی حکومتوں نے پاکستانی قوم کی تذلیل و توہین کی ہے اور صدر ٹرمپ اور انکے دیگر حکومتی اہلکاروں نے پاکستان کے خلاف مہم شروع کررکھی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ واشنگٹن میں قائم بھارتی سفارتخانہ امریکی سرپرستی میں بلوچستان کے علیحدگی پسندوں کو پاکستان میں عدم استحکام پھیلانے کے قابل مذمت ایجنڈا پر عمل کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت اور افغانستان کو اپنے پڑوسی ملک پاکستان سے تعلقات اچھے کرنے چاہئیں نہ کہ امریکی سامراج کا پٹھو بن کر اس خطے میں کشیدگی پھیلانی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ امریکا اور اس کے اتحادیوں نے بڑے منظم طریقے سے فلسطین کی دوست حکومتوں اور تنظیموں کو نشانہ بنایا ہے اور ان ملکوں پر جنگیں مسلط کی اور کروائی ہیں تاکہ فلسطین پر ناجائز قبضہ کرنے والے اسرائیل کو بچاسکے۔

انکا کہنا تھا کہ اسرائیل نے نہ صرف فلسطین بلکہ لبنان اور شام کے علاقوں پر بھی ناجائز قبضہ کررکھا ہے لیکن امریکا اور اس کے اتحادی انٹرنیشنل لا کی خلاف ورزی کرتے ہوئے دیگر ممالک میں جارحیت کررہے ہیں اور اقوام متحدہ خاموش تماشائی کا کردار ادا کررہا ہے۔ اسرائیل کے انسانیت کے خلاف جرائم اور جنگی جرائم میں امریکا اور اس کے اتحادی شریک ہیں۔ امریکا نے عراق و افغانستان میں بھی یلغار کی اور وہاں اس نے دہشت گردوں کی آبیاری کی تاکہ اس بہانے سے ان دونوں ملکوں میں اپنے فوجی اڈوں کو قائم رکھ سکے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کی تمام تر مشکلات کا ذمے دار بھی امریکا اور اس کے بعض اتحادی ہیں کیونکہ وہ پاکستان کو دھمکیاں دیتے ہیں کہ ایران سے گیس نہ خریدیں، تجارت نہ کریں اور اس کی وجہ سے آج پاکستان میں انرجی کا بحران ہے، ملک میں بجلی مہنگی ہے اورلوڈ شیڈنگ ہورہی ہے ، صنعتیں بند ہورہی ہیں یا پیدوار بالکل کم ہوچکی ہے جس کی وجہ سے بر آمدات میں بھی بے حد کمی واقع ہوئی ہے اور پاکستان اپنی آمدنی کا ایک بڑا حصہ امریکا اور اس کے اتحادیوں کی اس ایران دشمن پالیسی کی وجہ سے کھوچکا ہے۔


 انہوں نے کہا کہ پاکستان ترکی سے براستہ ایران تجارت کرکے جو زر مبادلہ کما سکتا تھا وہ بھی امریکا اور اس کے بعض اتحادی ممالک کی بلیک میلنگ کی وجہ سے نہیں کما سکا۔ اس لئے ضرورت اس بات کی ہے کہ پاکستان سمیت عالم اسلام و عرب اور تیسری دنیا کے ممالک امریکا اور اس کے اتحادیوں کی دھمکیوں اور بلیک میلنگ کو جوتے کی نوک پر رکھ کر آزاد ہوکر اپنی پالیسیاں بنائیں اور حقیقی معنوں میں خود مختاری حاصل کریں۔

Page 9 of 859

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree