The Latest

وحدت نیوز(اسلام آباد) جمہوری روایات کے علمبراد بھی جمہوری حکومت کو گرانے کی باتیں کر رہے ہیں جب بھی اشرافیہ کا احتساب ہوتا ہے جمہوریت اور ملکی سلامتی کو خطرات لاحق ہو جاتے ہیں۔ملکی دولت لوٹنے والوں کا بلاامتیاز احتساب کیاجائے۔ ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے میڈیا سیل سے جاری بیان میں کیاانہوں نے کہا کہ سندھ میں براجمان جماعت وفاقی حکومت کی ٹانگیں کھینچنے کی بجائے صرف کراچی شہرکوصاف پانی اور اسکا کوڑا ہی صاف کر دے تو عوام انہیں کاندھوں پر بیٹھے گی غریب عوام کی خون پسینے کی کمائی کو دونوں ہاتھو ں سے لوٹنے والے کسی رعایت کے مستحق نہیں ہو سکتے ،کرپٹ عناصر پھر کسی این آر او کے تلاش میں ہیں کرپٹ عناصر کے خلاف قانونی کاروائیا ں عوامی امنگوں کے مطابق ہے ۔ عدلیہ اور نیب کی کرپشن کے خلاف اقدامات کی بھر پور تائید کرتے ہیں ۔عوام عدلیہ اور نیب کے فیصلوں کے پیچھے کھڑی ہے ۔

وحدت نیوز(کوئٹہ) میجر ریٹائرڈ نادر علی سابق ایڈیشنل چیف سیکریٹری بلوچستان نے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے نامزد امیدوار سید محمد رضا ( آغا رضا ) کی حمایت اور بھر پور تعاون کا اعلان کیا،واضح رہے کہ سابق وزیر قانون آغا رضا ضمنی الیکشن حلقہ پی بی 26 کوئٹہ 3 ہزارہ ٹاون سے بلوچستان کی صوبائی اسمبلی کی نشست کیلئے امیدوار ہیں،آغا رضا ایک تجربہ کار با بصیرت قد آور سیاسی شخصیت ہے جن کا انتخابی نشان خیمہ ہے ،میجر ریٹائرڈ نادر علی نے کہا کہ حلقہ پی بی 26 کے عوام ان تمام نمائندوں میں سب سے بہتر نمائندے آغا رضا کو ووٹ دیکر کامیاب بنائیں ۔

وحدت نیوز(رپورٹ/ایس اے زیدی) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے شعبہ تنظیم سازی کے زیراہتمام تنظیمی مسئولین کیلئے 2 روزہ بین الصوبائی تنظیمی و تربیتی ورکشاپ کا انعقاد سکھر میں کیا گیا، اس ورکشاپ میں صوبہ سندھ اور بلوچستان کے صوبائی اور ضلعی ذمہ داران نے شرکت کی۔ ورکشاپ کا مقصد کارکنان و مسئولین کی عصر حاضر کے تقاضوں کے مطابق تنظیمی، معنوی اور فکری تربیت کرنا تھا۔ وکشاپ کا باقاعدہ آغاز 8 دسمبر ہفتہ کی صبح ساڑھے نو بجے تلاوت کلام پاک سے ہوا۔ سٹیج سیکرٹری کے فرائض ایم ڈبلیو ایم صوبہ سندھ کے سیکرٹری تنظیم سازی منور جعفری نے انجام دیئے۔ جس کے بعد صوبائی سیکرٹری جنرل سندھ علامہ مقصود علی ڈومکی نے شرکائے ورکشاپ سے خطاب کیا۔ اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ ہمیں اپنے آپ کو عصر حاضر کے تقاضوں کے تحت ڈھالنا ہوگا، ہمارا دشمن بہت چالاک اور ہوشیار ہے، وہ روز بروز اپنے آپ کو مضبوط کر رہا ہے۔ مجلس وحدت مسلمین پاکستان میں مظلومین کی واحد امید ہے، ہم ایک ایسے نظام کے ساتھ مربوط ہیں، جو عالمی سطح پر اس وقت کے یزیدوں اور فرعونوں کے مدمقابل ہے۔ نظام ولایت فقیہ کے پیروکار ہی آج میدان میں ہیں اور امریکہ، اسرائیل اور بعض نام نہاد مسلم عرب ممالک کے اسلام دشمن سازشوں کو عملی طور پر ناکام بنا رہے ہیں۔ اس موقع پر علامہ مقصود علی ڈومکی نے میزبان صوبہ کے مسئول کی حیثیت سے شرکائے ورکشاپ اور قائدین کا شکریہ ادا کیا۔

بعد ازاں مجلس وحدت مسلمین کے ڈپٹی سیکرٹری تنظیم سازی آصف رضا ایڈووکیٹ کو دعوت دی گئی، جنہوں نے شرکاء کو ورکشاپ کے انعقاد کے اغراض و مقاصد سے آگاہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ دشمن نے پاکستان میں ایم ڈبلیو ایم کی تاسیس سے لیکر اب تک ہمیں الجھائے رکھا، کبھی دہشتگردی و ٹارگٹ کلنگ، کبھی حکومتی دباو اور کبھی کیا تو کبھی کیا۔ تاہم اب وقت آگیا ہے کہ ہم اپنے آپ کو مضبوط کریں اور قوم کی تربیت کریں، تاہم اس سے قبل تنظیمی احباب کی صلاحیتوں کو نکھارنے کیلئے اس قسم کی ورکشاپ کا انعقاد ضروری تھا۔ بعد ازاں مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری تربیت علامہ ڈاکٹر یونس حیدری نے اپنا لیکچر شروع کیا، اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ ولایت امیر المومنین علی علیہ السلام ہمیں متحد کرتی ہے، کربلا ہمیں تحرک دیتی ہے اور مہدویت ہمیں امید دلاتی ہے، اپنے اس عظیم عقیدے اور مکتب کی سربلندی اور اپنی قوم کے افراد کے تحفظ کیلئے ہمیں کام کرنا ہوگا، دین اور سیاست کو الگ سمجھنا ہمارے مکتب کی تعلیمات نہیں، ایک منظم منصوبہ بندی کے تحت ہماری قوم میں اس سوچ اور نظریہ کو پروان چڑھایا جارہا ہے کہ دین اور سیاست الگ ہیں، دین کا سیاست اور سیاست کا دین سے کوئی تعلق نہیں، ہمارے ہاں اکثریت اسی سوچ کے حامل افراد کی ہے۔ہمارے لوگوں کو اجتماعی کاموں سے روکا گیا، انہیں ڈرایا گیا کہ اجتماعی جدوجہد میں آپ کی جان جاسکتی ہے، آپ کو نقصان کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔ امام خمینی (رہ) کے مقابلہ میں بھی مجتہدین کو کھڑا کیا گیا، امام خمینی (رہ) کو بھی ڈرانے کی کوشش کی گئی، لیکن امام خمینی (رہ) نے فرمایا کہ میرا خون امام حسین علیہ السلام کے خون سے زیادہ مقدس تو نہیں، میرا خانوادہ امام حسین علیہ السلام کے خانوادے سے بڑھ کر تو نہیں۔

ڈاکٹر یونس حیدری نے مزید کہا کہ 61 ہجری میں بھی شریعت پامال ہو رہی تھی اور آج بھی یہی کوششیں کی جا رہی ہیں، سب غلط کام ہو رہے تھے تو ہی امام حسین علیہ السلام نے قیام کیا، امام حسین علیہ السلام کی پیروی کرتے ہوئے ہی امام خمینی (رہ) نے جدوجہد کی۔ مجلس وحدت مسلمین جب میدان میں آئی تو پاکستان میں بھی ظلم ہو رہا تھا، ہم نہتے تھے، ہمارے پاس کوئی وسائل نہیں تھے، ہم نے عوامی و سیاسی جدوجہد کا راستہ اختیار کیا، ہم نے پاراچنار کا محاصرہ توڑا، دہشتگردوں کیخلاف دوٹوک موقف اپنایا، ہمیں حکمت عملی سے کام کرنے کی ضرورت ہے، میرا ملک اینٹی ظہور بلاک میں ہے، ہمیں اپنے ملک کو اینٹی ظہور بلاک سے نکالنا ہوگا اور عالمی سطح پر موجود اس عالمی تحریک کا حصہ بننا ہے، جس کی بنیاد امام خمینی (رہ) نے رکھی تھی۔ورکشاپ سے اگلا خطاب مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کیا، اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ تنظیم ایسے افراد کے مجموعہ کو کہتے ہیں، جن کا ہدف ایک ہو، سوچ ایک ہو، آپس میں ہم آہنگی ہو، پوری دنیا میں لوگ جماعتوں کی شکل میں اکٹھے ہوتے ہیں اور اپنے اہداف حاصل کرتے ہیں، منظم ہوئے بغیر ہم اپنے اہداف حاصل نہیں کرسکتے، اللہ کی زمین پر عادلانہ نظام بغیر منظم ہوئے نافذ نہیں کیا جاسکتا۔

انہوں نے کہا کہ جماعت بنانا اور منظم ہونا ہماری ضرورت ہے۔ جب ہم منظم ہوتے ہیں تو ہماری آواز میں طاقت پیدا ہوتی ہے، اکٹھے ہوکر رہنا ہماری ضرورت ہے، مشترکہ اہداف ہی ہمیں متحد کرتے ہیں، ہم یہاں اسی لئے اکٹھے ہوئے ہیں کہ ہمارے اہداف ایک ہیں، منتشر ہوکر ہم دشمن تک نہیں پہنچ سکتے، ہمارا اہدف ایسا ہونا چاہئے کہ جس کو حاصل کرنے کے بعد ہم تھکاوٹ محسوس نہ کریں، اکٹھے ہوکر ہی لمبا سفر کیا جاسکتا ہے، پاک ہدف کیلئے پاک نیت کا ہونا ضروری ہے، خالص نیت بہت سے عیوب سے انسان کو بچاتی ہے، الہیٰ اہداف ہوں تو اس میں میرٹ کو مدنظر رکھنا بہت ضروری ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جماعت کے لوگوں میں باہمی احترام، ہمدردی اور بھائی چارہ ہونا چاہیئے، ذاتی تعلقات پر آپ کو اصولوں کو فوقیت دینی چاہیئے، ہمیں خود سازی کی ضرورت ہے، ہمارا اخلاق بہترین ہونا چاہیئے، کسی تنظیمی کارکن کیلئے ضروری ہے کہ وہ عبادت اور دعا و مناجات کو ترجیح دے، اپنی صلاحیتوں میں مزید نکھار پیدا کرے، قرآن پڑھنا ہماری شناخت ہونا چاہیئے، جماعت کے عہدیداروں کو ارادوں کا مضبوط ہونا چاہیئے، مضبوط دشمن کے مقابلہ کیلئے ہمیں اس سے زیادہ مضبوط ہونا ہوگا۔

علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کے بعد ایم ڈبلیو ایم کے مرکزی سیکرٹری تنظیم سازی سید مہدی عابدی نے میڈیا کی عصر حاضر میں اہمیت کے موضوع پر لیکچر دیا، اس موقع پر انہوں نے تنظیم کے میڈیا سیل کے فعالیت کو بہتر بنانے، ملکی و بین الاقوامی حالات پر نظر رکھنے اور میڈیا گروپس کے ساتھ اپنے تعلقات استوار کرنے کی ضرور ت پر زور دیا۔ سید مہدی عابدی کے لیکچر کے بعد نماز ظہرین اور طعام کا وقفہ ہوا، جس کے بعد علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کے دوسرے خطاب کا آغاز ہوا، اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ ہماری جماعت مروجہ سیاسی جماعتوں سے مختلف ہے، ہمارا ہدف پاور پالیٹکس نہیں، ہماری اور باقی سیاسی جماعتوں کی سیاست اور اہداف میں بہت فرق ہے، ہمارا ہدف لوگوں کو خدا کے قریب لانا ہے، لوگوں کی ہدایت کرنا ہے، ہماری جماعت کو ولائی جماعت اور لوگوں کو ولائی ہونا چاہیئے۔ ولائی معرکہ حق و باطل میں میدان میں حاضر نظر آتا ہے۔ اپنے وقت کے امام (عج) کی مدد و نصرت کرنا ولائی جماعت کے کارکن کو واجب سمجھنا چاہیئے، فکری و عملی طور پر ولایت فقیہ کی پیروی کرنی چاہیئے، جو ہمیں اپنے زمانہ کے امام عج کے قریب رکھے وہی ہمارا رہبر و قائد ہوسکتا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ جماعت کے کارکنوں کو بابصیرت ہونا چاہیئے، حالات حاضرہ پر مکمل نظر رکھنی چاہیئے، دوست اور دشمن شناسی ہونی چاہیئے، ڈٹ جانا اور بروقت فیصلہ کرنا چاہیئے، تنظیمی کارکن ظلم سے ٹکرانے والا ہونا چاہیئے، حق کا دفاع کرنے والا ہونا چاہئیے، تمام مظوموں کا ساتھ دینے والا ہونا چاہیئے، انتھک، آمادہ و تیار ہونا چاہیئے، اخلاق حسنہ کا مالک ہونا چاہیئے، جماعت کا محور مسجد و امام بارگاہ کو ہونا چاہیئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں عزاداری کو سنت سے نکال کر ظہور امام زمانہ (عج) کی زمینہ سازی کرنے والی عزاداری بنانا ہوگا۔ عزاداری سالوں کے کام مہینوں میں کر دیتی ہے۔ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کے بعد نماز مغربین کا وقفہ ہوا اور بعد ازاں مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل سید ناصر عباس شیرازی نے عالمی حالات پر شرکائے ورکشاپ کو تفصیلی لیکچر دیا، ان کا کہنا تھا کہ امریکہ نے مختلف حوالہ جات سے دنیا پر اپنا تسلط قائم کرنے کی کوشش کی، اس نے اپنا مضبوط نیٹ ورک بنا رکھا ہے، دفاعی، اقتصادی، جاسوسی کے آلات کو استعمال کرنے کیساتھ ساتھ کئی مسلم ممالک کو بھی اپنا آلہ کار بنایا ہوا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ امریکہ نے زمینی، فضائی حتیٰ کہ ہر طریقہ کو استعمال کرتے ہوئے دنیا کو کنٹرول کرنے کی کوشش کی ہے، تاہم امریکہ کے اتنے مضبوط اور منظم نظام کو اگر کسی نے چیلنج کیا یا شکست دی، وہ صرف اور صرف مکتب اہلبیت (ع) ہے۔ امریکہ کو ایران سے شکست ہوئی، لبنان سے ہوئی، شام میں شکست ہوئی، عراق میں شکست ہوئی اور ان تمام فتوحات کا سہرا مکتب اہلبیت (ع) کو جاتا ہے۔ سید ناصر شیرازی کے لیکچر کے بعد علامہ مختار امامی مرکزی ترجمان مجلس وحدت مسلمین نے مجلس عزاء پڑھی، جس کے بعد پہلے روز کی آخری نشست کا باقاعدہ اختتام کر دیا گیا۔

 ورکشاپ کے دوسرے روز کا باقاعدہ آغاز تلاوت کلام سے صبح ساڑھے نو بجے ہوا، منقبت پیش کرنے کے بعد مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ سید احمد اقبال رضوی نے اسلامی تحریک کے کارکن کی خصوصیات کے موضوع پر شرکائے ورکشاپ سے خطاب کیا، اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ مومن ایک جگہ ٹھہر نہیں جاتا بلکہ مسلسل جدوجہد کرتا ہے، اسلامی تحریک کے کارکن میں جستجو کا مادہ موجود ہوتا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ اسلامی کارکن میں سب سے پہلے اسلام نظر آنا چاہیئے اور صرف اور صرف خدا کیلئے کام کرنا چاہیئے، اگر ہم خدا کیلئے کام نہیں کریں گے تو لوگوں سے امید رکھیں گے، اسلامی تحریک کے کارکن کو اپنا رابطہ خدا سے رکھنا چاہیئے، اس کے ہر عمل میں خلوص شامل ہونا چاہیئے، اسے ہمیشہ میدان میں رہنا چاہیئے۔ انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین کی کامیابی کا سب سے بڑا سبب اس کا ہر حال میں میدان میں حاضر رہنا ہے، جب ہم میدان میں اترے تو ہمارا ساتھ دینے والا کوئی نہیں تھا، لیکن خدا نے فرشتوں کے ذریعے ہماری مدد فرمائی، ہمارے گمان میں بھی نہیں تھا، جو جو ہم نے کیا۔ ہم نے سیاست میں بھی حصہ لیا اور اپنی بساط کے مطابق کامیابی حاصل کی۔

 بعدازاں ورکشاپ سے آخری خطاب علامہ ڈاکٹر یونس حیدری نے ولایت کے موضوع پر کیا، ان کا کہنا تھا کہ ولایت کے بغیر انسان کی عبادت قبول نہیں ہوتی، جو بھی علی علیہ السلام سے محبت کا دعویدار ہے، وہ اپنے آپ کو مشکلات کیلئے تیار رکھے، جب کوئی مکتب ولایت سے دور ہو جاتا ہے تو وہاں سے داعش اور طالبان جیسے لوگ جنم لیتے ہیں اور جو ولایت کے قریب ہوتا ہے، وہاں سے خمینی (رہ) پیدا ہوتے ہیں۔ ورکشاپ کا اختتام پر شرکائے میں کتابوں کے تحائف تقسیم کئے گئے۔

وحدت نیوز(کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے نامزد امیدوار سید محمد رضا (آغا رضا) منور کالونی میں ایک حمایتی کارنر میٹنگ میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حلقہ پی بی 26کے عوام نے ایک بار موقع دیاتو حلقہ 27 سے بڑھ کر خدمت کریں گے، اس وقت ہمیں کئی سازشوں کا سامنا ہے ہم سب نے مل کر ان سازشی عناصر کے مذموم مقاصد کو ناکام بنائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ غیور ہزارہ قبائل کی وطن کی تعمیر و ترقی میں نمایا ںکردار رہا ہے کسی ایک شخص کی غلطی کی سزا پوری قوم کو نہیں دی جا سکتی مخالفین کو اپنی شکست نظر آرہی ہے اگر اللہ کی مدد و نصرت شامل حال رہا اور آپ بھائیوں مائوں بہنوں نے ہم پر اعتماد کا اظہار کیا تو کامیابی پوری قوم کی ہوگی۔

آغا رضا نے کہا کہ روڑ اسکول ہسپتال اور بنیادی ضرورتیں تو ہر نمائندہ بنا سکتا ہے لیکن ان سے زیادہ اہم مجموعی عوامی افکار کی نمائندگی اور شہری حقوق کا دفاع کرنا ہے ۔مجلس وحدت مسلمین پاکستان واحد دینی سیاسی جماعت ہے جو اتحاد کی داعی ہے ہم تمام مکاتب فکر کیساتھ برابری کی بنیاد پرتعلقات چاہتے ہیں۔

وحدت نیوز(شکارپور) وارثان شہداء کمیٹی شکارپور کے زیر اہتمام شکارپور میں شیعہ مراکز مساجد اور امام بارگاہوں کی سیکورٹی کلوز کرنے اور ایس ایس پی کے متعصبانہ رویئے کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ ریلی کی قیادت مجلس وحدت مسلمین سندہ کے سیکریٹری جنرل اور شہداء کمیٹی کے چیئرمین علامہ مقصودعلی ڈومکی نے کی جبکہ ریلی میں وارثان شہداء قمر الدین شیخ، محمد عظیم سومرو، شہداء کمیٹی کے رہنما سکندر علی دل؛ ، ایم ڈبلیو ایم کے ضلعی سیکریٹری جنر ل برادر فدا عباس لاڑک ، برادر اصغر علی سیٹھار، و دیگر شریک ہوئے۔

اس موقعہ پر گفتگو کرتے ہوئے علامہ مقصودعلی ڈومکی نے کہا کہ شکارپور جیسے حساس ضلعے میں سیکورٹی کلوز کرکے دھشت گردوں کو آسان ٹارگٹ دیا گیا ہے جبکہ وارثان شہداء اور جو وکلاء اس کیس کی پیروی کر رہے ہیں ، انہیں مسلسل دھشت گردوں کی جانب سے دھمکیاں مل رہی ہیں۔ اہم شیعہ مراکز، شخصیات اور امام بارگاہوں سے کل 64 پولیس ہٹا کر انہیں غیر محفوظ بنا دیا گیا ہے، جبکہ ایس ایس پی شکارپور ساجد سدوزئی کے متعصبانہ روئے نے شکارپور ضلع کے حالات کو تشویش ناک بنا دیا ہے۔ آئی جی پولیس اور سندہ حکومت اس منفی اور متعصبانہ رویئے کا فوری نوٹس لیں۔

انہوں نے کہا کہ وارثان شہداء نے جمعہ21 دسمبر کو یوم احتجاج منانے کا فیصلہ کیا ہے میں سندہ کے عوام خصوصا عاشقان اہل بیت ؑ سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ وارثان شہداء کی اپیل پر جمعہ 21 دسمبر کو یوم احتجاج منائیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ شیعہ مراکز کو حسب ضرورت سیکورٹی دی جائے اور وارثان شہداء سے کئے گئے معاہدے پر مکمل عمل در آمد کیا جائے۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) ہندوستان سو سال اور بھی کوشش کرلے کشمیر کی تحریک آزادی کو دبا نہیں سکتا، ہندوستان اربوں ڈالر ز اور لاکھوں فوجی لگا کر بھی تحریک آزادی کشمیر کو خاموش نہیں کروا سکا ہندوستانی قیادت کو نوشتہ دیوار پڑھ لینا چاہیے گزشتہ چند دنوں میں قابض ہندوستانی فورسز کے ہاتھوں ہونی والی شہادتوں کی شدید مذمت کرتے ہیں ہیں ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے میڈیا سیل سے جاری بیان میں کیا انہوں نے کہا کہ گزشتہ چند دنوں میں ہونی والی چودہ شہادتوں پر تمام امن پسندوں کے دل غم سے بوجھل ہیں ،ستر سالوں میں مسئلہ کشمیر کا حل نہ ہونا اقوام متحدہ اور عالمی امن کی علمبردار تنظیموں کے منہ پر طماچہ ہے ۔ہزاروں شہادتوں اور لاکھوں افراد کے زخمی ہونے کے باوجود عالمی ضمیر پر جوں نہیں رینگی بھارت کا بھیانک چہر ہ اگر کسی نے دیکھنا ہے تو وہ مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے انسانیت سوز مظالم کو دیکھ لے ۔بھارت حقیقی معنوں میں جنوبی ایشاکا اسرائیل ہے جو کہ کشمیریوں پر گزشتہ ستر سالوں سے مظالم ڈھا رہا ہے مسئلہ کشمیر پر عالمی امن اداروں کا کردار انتہائی افسوس ناک ہے ۔کشمیر کی آزادی کا سورج طلوع ہو کر رہے گا ہم کشمیری بھائیوں کی ہر پلیٹ فارم پر حمایت جاری رکھیں گئے۔

وحدت نیوز(قم المقدسہ) سعودی عرب کی سربراہی اور امریکہ واسرائیل کی پشت پناہی سے بننے والے نام نہاد دہشت گردی مخالف عسکری اتحاد کے یمن کے نہتے شہریوں پر گذشتہ 4 سال سے جاری مظالم عصر حاضر میں ظلم و انتہا پسندی کی بدترین مثال ہیں. ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین شعبہ بین الاقوامی امور کے سربراہ حجت الاسلام والمسلمین ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے ظلم اور انتہا پسندی کے خلاف جدوجہد کے عالمی دن کے موقع پر اپنے ایک بیان میں کیا. انہوں نے کہا کہ ہر ملک و قوم کو اپنی مرضی کا نظام حکومت بنانے اور اپنی مرضی سے اپنی قسمت کے فیصلے کرنے کا حق حاصل ہے. اگر کوئی جارح طاقت کسی سے ان کا یہ حق استقلال و ارادہ چھیننے یا ان کی سرزمین پر جارحیت دکھائے تو اس قوم کو حق حاصل ہے کہ وہ اپنی سرزمین اور اپنے حق استقلال کی حفاظت کریں. ان کے بقول تمام بین الاقوامی قوانین و اداروں میں یہ حق بطور ایک بنیادی حق تسلیم کیا جاتا ہے. انہوں نے کہا یمنی عوام کی مزاحمت اسی بین الاقوامی مسلمہ اصول کے تحت قابل دفاع ہے۔

حجت الاسلام والمسلمین ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے سعودی و اماراتی اتحاد کی یمن پر لشکر کشی کے نتیجے میں ہونے والے جانی و مالی نقصان کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یمن پر مسلط شدہ جنگ کے نتیجے میں تقریبا 80% گھر تباہ ہو چکے ہیں ہزاروں ھاسپیٹلز ، تعلیمی ادارے ، مساجد اور ملک کا دیگر انفرا اسٹرکچر تباہ ہو چکا ہے ملینز شہری بے گھر ہیں. قوام متحدہ کے انسانی حقوق کے ادارے بھی انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزیوں کے قائل ہیں.  اور بین الاقوامی طور پر ممنوعہ اسلحہ استعمال کیا گیا ہے۔

بچوں کی اسکول وینز تک بھی ظالم قوتوں کی بمبارمنٹ سے محفوظ نہیں رہ سکیں. اب تک لاکھوں نہتے یمنی شہری شہید ہوچکے ہیں. انہوں نے کہا 16 ہزار بچے غذائی قلت کے سبب موت کی سرحد پر کھڑے ہیں اور ہزاروں لقمہ اجل بن چکے ہیں.  اتحادی افواج کے محاصرے میں ہونے کیوجہ یمنی عوام تک خوراک و دوائیاں نہیں پہنچ سکتیں لہذا یمن کو ادویات و غذا کی شدید قلت کا سامنا ہے. انہوں نے کہا اب تک کی مسلط شدہ جنگ میں آئے روز کی بمباری کے نتیجے میں ملکی شہری نظام انتہائی بری طرح متاثر اور مفلوج ہوچکا ہے.انہوں نے اقوام عالم, انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں اور سول سوسائٹیز کے باشعور و باضمیر لوگوں سے مطالبہ کیا کہ وہ یمن کے نہتے شہریوں پر ہونے والے ظلم کا نوٹس لیں اور اس پر اپنی آواز بلند کریں تاکہ سعودی و اماراتی جارح اتحاد کو اس انسانی جنایت سے روکا جاسکے۔

حجت الاسلام والمسلمین ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے بیرون ممالک قائم دفاتر و نمایندگان اور خصوصا پاکستان میں موجود تنظیمی اداروں اور عہدیداروں کو تاکید کی کہ وہ 18 دسمبر ظلم و انتہا پسندی کے خلاف جدوجہد کے عالمی دن کو یمن کی نہتی عوام پر ڈھائے جانے والے مظالم کے خلاف احتجاج کے طور پر منائیں اور اس حوالے سے احتجاجی ریفرنسز, بریفنگز و کانفرنسز کا اہتمام کریں۔

وحدت نیوز(گلگت) پاکستان پیپلز پارٹی کی آل پارٹیز کانفرنس عوام کو گمراہ کرنے کی ناکام کوشش ہے۔پیپلز پارٹی گلگت بلتستان کے عوام کے بنیادی حقوق کیلئے مخلص ہوتی تو اپنی تین باریوں میں مسئلہ حل کرچکے ہوتی۔گلگت بلتستان کے آئینی حقوق کی راہ میں مسلم لیگ اور پیپلز پارٹی ہی سب سے بڑی رکاوٹ بنے ہوئے ہیں۔

مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے ترجمان محمد الیاس صدیقی نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان میں کانفرنسز کرنے سے قبل اپنے مرکزی رہنماؤں اعتزاز احسن اور رضا ربانی کو قائل کروائیں۔جب یہ دونوں جماعتیں اقتدار میں ہوتی ہیں تو گلگت بلتستان کے بنیادی مسائل سے صرف نظر کرتے ہیں اور جب اقتدار چھن جاتا ہے تو ان کو گلگت بلتستان کے عوام کے حقوق یاد آنے لگتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر پیپلز پارٹی اور نواز لیگ چاہے تو اب بھی اسمبلی میں قرارداد پیش کرکے گلگت بلتستان کو آئینی حقوق دلواسکتے ہیں اور اس وقت گلگت بلتستان کے پارٹی رہنماؤں کا بیانیہ کچھ اور ہوتا ہے اور مرکزی رہنماؤں کا کچھ اور۔پیپلز پارٹی کی گلگت بلتستان کے حقوق کے حوالے سے آل پارٹیز کانفرنس کا انعقاد کھسیانی بلی کھمبہ نوچے کے مصداق ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے اس کانفرنس کو آل پارٹیز کانفرنس کا نام دینا ہے ایک دھوکہ ہے جبکہ گلگت بلتستان میں موجود اکثریتی سیاسی جماعتوں نے اس کانفرنس کو مسترد کرتے ہوئے شرکت سے انکار کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان جماعتوں کا اپنا قبلہ درست نہیں اور ہرمرتبہ یہ ایک نئے نعرے کے ساتھ عوام کو بیوقوف بنانے کی کوشش کرتے ہیں ۔گلگت بلتستان کے عوام اب بیدار ہوچکے ہیں جو اب کھوکھلے نعروں کو ہرگز قبول نہیں کرینگے۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین  کے پی بی 26 کوئٹہ میں مرکزی الیکشن آفس کا افتتاح بدست محترم میجر ریٹائرڈ نادر علی صاحب ہوا،جناب جعفرعلی جعفری نے پروگرام کا آغاز تلاوت کلام پاک سے کیا جناب ذاکر حسین صاحب نے کہا کہ ہمیں درست نمائندے کا انتخاب کرنا چاہیئے جو اسمبلی میں جا کر ہمارے حقوق کا دفاع کر سکے ،جناب امان اللہ نے کہا کہ تمام امیدوار ہمارے دست و بازو ہیں لیکن ان تمام امیدواروں میں سے سب بہترین نمائندہ جناب آغا رضا ہیں ۔

جناب حاجی طاہر نظری نے کہا کہ ہزارہ ٹاون کے مسائل بہت زیادہ ہیں ایسے کسی نمائندے کا انتخاب کریں جو ان مسائل کو حل کرنے کی صلاحیت و قابلیت کا حامل ہو۔ آغا رضا کی گزشتہ کارکردگی کسی سے پوشیدہ نہیں انہوں پانچ سالہ مدت میں بے مثال خدمات انجام دیں ہیں۔

علامہ سید ہاشم موسوی نے کہا کہ ہر کام کیلئے اہلیت کا ہونا ضروری ہے ہزارہ ٹاون کے باشعور عوام جانتے ہیں کہ آغا رضا ان تمام امیدواروں میں سب سے مناسب امیدوار ہیں
مہمان خصوصی جناب میجر ریٹائرڈ نادر علی نے کہا کہ آغا رضا ایک تجربہ کار اور آزمودہ نمائندہ ہیں ان کا انتخاب آپ عوام نے کرنا ہے ہم ان کی قابلیت اور کارکردگی کی بنیاد پر مکمل حمایت کا اعلان کرتے ہیں ۔

مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے نامزد امیدوار سید محمد رضا (آغا رضا ) نے جملہ حاضرین اور حمایت کرنے والے معتبرین اور کارکنوں کا شکریہ ادا کرتے ھوئے کہا کہ ہزارہ ٹاون بروری کے با شعور عوام اپنی ووٹ کی طاقت سے مخلص نمائندے کا انتخاب کریں گے انہوں نے کہا کہ ہم نے ماضی میں بھی ہر میدان میں عوام کی نمائندگی کی ہے اور آئندہ بھی اپنی قومی ذمہ داریوں کو بہ طریق احسن انجام دیتے رہیں گے ۔


وحدت نیوز(لاہور) مجلس وحدت مسلمین کے صوبائی سیکرٹری جنرل پنجاب علامہ سید مبارک علی موسوی نے کہا ہے کہ دسمبر 2014 میں ہونے والے سانحہ آرمی پبلک اسکول کا غم آج بھی قوم کے دل میں زندہ ہے، اے پی ایس سمیت تمام شہداء کے اہلخانہ کو سلام پیش کرتے ہیں، علامہ مبارک موسوی نے سانحہ اے پی ایس کے چارسال مکمل ہونے پر پیغام میں کہا کہ معصوم بچوں کا لہو بہا کر ظلم وبربریت کا سفاک باب لکھا گیا۔انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کیخلاف کامیابی سے لڑنے پر پاک فوج، تمام سیکیورٹی فورسز کی قربانیوں کے معترف ہیں۔علامہ مبارک علی موسوی نے مزید کہا کہ سانحہ اے پی ایس قومی المیہ ہونے کے ساتھ تجدید عہد کا بھی دن ہے، قوم آج یہ عہد کرے کہ اپنے شہدا کے خون کے رائیگاں نہیں جانے دیا جائے گا اور ملک میں انتہاپسندی اور دہشتگردی کے خلاف متحد رہیں گے۔

Page 9 of 903

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree