The Latest

وحدت نیوز(کوئٹہ) سانحہ ہزار گنجی سبزی منڈی میں بم دھماکے اور قیمتی انسانی جانوں کے نقصان کے خلاف مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژن کی جانب سے جامع مسجد کلاں کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں ایم ڈبلیوایم کے رہنما علامہ ہاشم موسوی، علامہ برکت مطہری، علامہ ولایت جعفری اور علامہ حسنین وجدانی نے خطاب کیا اس موقع پر ایم ڈبلیوایم کے مرکزی رہنما آصف رضا ایڈوکیٹ سمیت مظاہرین کی بڑی تعداد شریک تھی، مقررین نے سانحہ کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے وزیر اعظم، آرمی چیف اور چیف جسٹس سےمجرموں کی فوری گرفتاری اور سخت کاروائی کا مطالبہ کیا ۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژن کے میڈیا سیل سے جاری شدہ بیان میںمرکزی رہنما اور سابق وزیر قانون آغا رضانے کہاہے کہ غربت کے باعث عوام کا معاشرے میں زندگی گزارنا مشکل ہو رہا ہے، مہنگائی کے خلاف حکومت کے اقدامات صرف کاغذی کاروائیوں تک ہی محدود ہیں۔ملک میں اکثر و بیشتر افراد خط غربت سے نیچے زندگی بسر کر رہے ہیں، روزگار کے مواقع نہیں اور حکومت اس معاملے پر ساکن ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ ملک میں لاکھوں بلکہ کروڈوں افراد زندگی بسر کرتے ہیں ، ہر فرد کو اسی معاشرے میں زندگی گزارنا ہے اور غربت عوام کی زندگی مشکل بنا رہی ہے۔ گزشتہ کہی سالوں سے سطح غربت میں کوئی خاص کمی نظر نہیں آئی، یوں لگتا ہے جیسے اس مسئلے کے حل کیلئے کوئی کام کیا ہی نہیں گیا ہو۔ غربت سے دوچار افراد کو صرف پیسے فراہم کرنے سے غربت کا خاتمہ ممکن ہے۔ مختلف حکومتی اور غیر حکومتی اداروں کی جانب سے دیئے گئے چند روپیوں کی بدولت غریب افراد صرف چند مہینے یا چند دن ہی سکون سے گزار سکتے ہیں، اس کے بعد انہیں پھر اسی غربت اور اسی پریشانی کا سامنا ہوگا۔ملک میں ٹیکسس اور کرپشن کی وجہ سے اشیائے خورد و نوش کی قیمتیں بھی آسمانوں کا سفر طے کر رہی ہے۔

انہوںنے کہاکہ حکومت اعلان کرتی ہے کہ ان اشیاء کے قیمتوں میں کمی کی جائے تاکہ یہ سب عوام کے دسترس تک پہنچ سکے مگر افسوس کی بات ہے کہ یہ اقدامات کاغذ کے ٹکڑوں سے شروع ہوکر وہی ختم ہو جاتے ہیں اور کوئی عملی اقدام نہیں اٹھایا جاتا۔ مہنگائی کے اعتبار سے حکومت کے اقدامات کاغذی کاروائیوں تک ہی محدود ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ ملک میں اکثر عوام خط غربت سے نیچے زندگی بسر کر رہے ہیں ۔ بچوں کی ایک بڑی تعداد چائلڈ لیبر کا شکار ہے،ان بچوں کو جس عمر میں اسکول میں تعلیم حاصل کرنا چاہئے اور دیگر سرگرمیوں میں مبتلاء ہونا چاہئے اس عمر میں ہمارے بعض بچے مختلف وسائل سے پیسے کمانے کے چکر میں لگے ہوتے ہیں ۔ یہ نہ صرف قوم کے مستقبل کے ساتھ ایک مذاق ہے بلکہ ہمارے ملک کی ترقی کیلئے ایک بڑے خطرے کی علامت ہے۔حکومت کو چاہئے کہ ملک میں ان تمام افراد کی مدد کرے جو خط غربت سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں۔مختلف اقدامات کے توسط سے ان لوگوں کی زندگی بہتر بنائی جا سکتی ہے ۔ بیان کے آخر میں مزید کہا گیا کہ روزگار کے مواقع پیدا کرنے سے ملک سے غربت کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے۔

وحدت نیوز(گلگت) ملک میں بڑھتی ہوئی دہشت گردی ریاست کو کمزور کررہی ہے۔حکومت دہشت گردوں کو لگام دینے کی بجائے انہیں میں سٹریم لائن میں لانے کیلئے کوشاں ہے۔حکومت قاتلوں کو نشان عبرت بنانے کی بجائے انہیں مین سٹریم میں لائے تو دہشت گردی بڑھتی رہے گی۔

مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے ترجمان محمد الیاس صدیقی نے ہزار گنجی کوئٹہ میں بے گناہ انسانوں کا خون بہانے پر سخت رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایک طرف حکومت دہشت گردی سے نمٹنے کے دعوے کررہی ہے تو دوسری جانب دہشت گردوں کے سرغنوں کی سزائیں معاف کرکے باعزت بری کررہی ہے۔حکومت کے اس دہرے معیار سے ملک کی بنیادی غیر مستحکم ہورہی ہیں اور ریاست کا ہر شہری خود کو غیر محفوظ سمجھنے لگا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان عوام کب تک حکومت کی سالہا سال سے غلط داخلہ وخارجہ پالیسیوں کے نتائج بھگتیں گے انہی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ملک کے کونے کونے میں دہشت گردوں نے اپنی کالونیاں بنائی ہیں۔کیا ریاست اتنی کمزور ہوچکی ہے کہ مٹھی بھر دہشت گردوں کو لگام دینے میں ناکام ہے یا پھر ریاست دہشت گردوں کے نیٹ ور ک کو توڑنا نہیں چاہتی۔حکومت بتائے کب تک یہ قوم اپنے پیاروں کے جناز وں کو آہوں اور سسکیوں میں زمین کے حوالے کرتی رہے گی۔گزشتہ دنوں سینکڑوں پاکستانیوں کے قاتل اختر مینگل کو آزاد کیا گیا اور کچھ دنوں بعد ہزارہ مومنین دہشت گردی کانشانہ بن جاتے ہیں اس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ ملک میں دہشت گرد آزاد ہیں اور جب اور جہاں وہ چاہے دہشت گردی کرسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان دہشت گردوں کی محفوظ پناہ گناہ ہے جہاں سے پورے ملک میں دہشت گرد بھیجے جاتے ہیں، حکومت بلوچستان میں اپنی رٹ قائم کرے یاپھر مستعفی ہوجائے۔انہوں نے ہزار گنجی میں شہید ہونے والوں کے پسماندگان سے دلی ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ دکھ کی اس گھڑی میں شہداء کے لواحقین کے ساتھ کھڑے ہیں خداوند عالم کی بارگاہ میں دعا گو ہیں کہ وہ تمام پسماندگان کو صبر واستقامت عطا کرے۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سربراہ علامہ راجہ ناصرعباس جعفری کا سانحہ ہزارگنجی میں قیمتی انسانی جانوں کے نقصان پرملت پاکستان اور ریاست پاکستان کیلئے اہم پیغام میں کہنا تھاکہ ايک بارپھر شیطان بزرگ امریکہ ، عالمی صیہونزم اور ریجن کے خون آشام ، امریکی اور صیہونی نوکروں کے آلہ کاروں نے وطن عزیز کے بے گناہ بیٹوں کو اپنے تیر ستم کا نشانہ بنایا اور بزدلانہ حملے میں انہیں شھید اور زخمی کیا ۔دعا ہےکہ خدا وند متعال ان مظلوم شھداء کی مغفرت فرمائے ، ان کے پسماندگان کو صبر جمیل اور زخمیوں کو شفائے کاملہ و عاجلہ عطا کرے ،ہم اس احمقانہ، بزدلانہ اور ظالمانہ حملے کی بھر پور مذمت کرتےہیں ۔یہ سب سانحات دراصل ہمارے ملک کی سالہا سال سے ملکی مفادات کے خلاف خارجہ اور داخلہ پالیسیوں کا نتیجہ ہیں اور جو کسی نہ کسی طرح سے ابھی تک جاری و ساری ہیں ۔عالمی دہشت گرد امریکہ جو مغربی ایشیا سے لیکر جنوبی ایشیا اور افریقہ کے اسلامی ممالک کو توڑ کر، انہیں resize کر کے reshape کرنا چاہتاہے، اس خطے کو اکھاڑ پچھاڑ کا تختہ مشق بنانے میں مصروف عمل ہےاور بعض مسلمان ممالک اس کام میں امریکہ کے فرنٹ میں کا رول ادا کر رہے ہیں، جن سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات سر فہرست ہیں،یمن کی جنگ ہو، یا شام اور عراق میں داعش اور دوسرے دہشت گردوں کی لاجسٹک سپورٹ ہویا مالی تعاون، اور اسرائیل کو محفوظ بنانے اور فلسطین پر اس کے قبضے کو قانونی حیثیت دینے کے لئے deal of century ہو، یا لیبیا میں دہشت گردی اور نا امنی ہو ان سب کاموں میں سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے حکمران پیش پیش ہیں۔امریکہ کی عالمی سطح پر hegemony کو مغربی ایشیا سے چیلنجز اور خطرات درپیش ہیں وہیںجنوبی ایشیا سے بھی ہیںوہ اس خطے کو بھی ناامن رکھنا چاہتاہےور اسی لئے داعش کو بھی اس حساس اور اسٹریٹیجک ریجن میں مختلف علاقوں سے داعش جیسے گروہ بھی منتقل کیے جا رہیں ہیں ۔جن کاھدف اس جنوبی ایشیا کو destablize کرنا ہے۔

انہوںنے کہاکہ پاکستان اگر چاہتاہے کہ یہ ریجن اور خود پاکستان پرامن ہوجائے تو پھر ہمیںامریکہ ، عالمی صیہونزم اور انکی پالیسز کو اسلامی ممالک میں انجام دینے والے " فرنٹ مین آلہ کاروں سے پاکستان کو بچانا ہو گا ۔اپنی خارجہ پالیسی اور داخلہ پالیسی کو از سر نو تشکیل دینا ہو گا ۔وگرنہ ہم ہرروز وطن عزیز کے بے گناہ بیٹوں کے جنازوں کے ٹکڑے اٹھاتے رہیںگے اور ان کے پسماندگان کو طفل تسلیاں دیتے رہیں گے ۔صاحبان اقتدار یہ جان لیں کہ خدا وند متعال کا انتقام شدید ہو گا، اور اللہ ہی مظلوموں کا حامی اور ان کا انتقام لینے والا ہے ۔یہ بات ذہن نشین رہے کہ قاتلوں کو مین اسٹریم میں لانے کے نام پر انہیں معافی دینے والے بھی ایک دن ضرور قادر مطلق کی بارگاہ میں کٹہرے میں کھڑے ھونگے اور جوابدہ ہونگے ۔اس وقت دکھی دل کے ساتھ خدا وند متعالی کی بارگاہ میں دست بدعا ہوں کہ وہ اہل وطن کو ان طوفانوں کا مقابلہ کرنے کا شعور، بصیرت اورہمت دے ، اپنی قوم کے مظلوموں کی خدمت میں عرض ہے کہ ہمیںاپنے دشمن کو پہنچاننا چاہئے جو ڈیرہ اسماعیل خان سے لیکر بلوچستان اور کراچی تک ہمیں قتل اور شہید کر رہاہے، وہ کونہ ہے؟ اور ایسا کیوں کر رہاہے ۔اس کی وجہ یہی ہے کہ و ہ ہمیں اپنے منصوبوں کی راہ میں رکاوٹ سمجھتا ہے ۔وہ پاکستان کو توڑنا چاہتاہے تا کہ یہ سارا خطہ ٹوٹ جائے، اور وہ جانتا ہے کہ اہل تشیع اور اولیاء اللہ سے محبت کرنے والے اہل سنت اور سیکورٹی کے اداروں کے جوان اس کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں، جب دوسرےلوگ غیر ملکی ایجنڈے پر عمل کرتےہوئے داعش، القاعدہ اور دوسرے دہشت گروہوں میں ڈہل سکتے ہیں اور پھر وطن اور اہل وطن پر کاری ضربیں لگا سکتے ہیں تو وہ اس وقت اہل تشیع اور ہمارے اولیاء اللہ کو ماننے والے اہل سنت بھائی نہ صرف ایسا نہیں کر سکتے بلکہ اس کا راستہ روکتے ہیں اور روکتے رہیں گے ۔لہذا انہیں مارو، انہیں کمزور کرو، انہیں مایوس کرو تا کہ وطن کے دفاع کی نیچرل فرنٹ لائن کو توڑ دیا جائے ۔آپ کی استقامت، صبر اور حوصلے سے دشمن ناکام ھوگا ، اور وطن میں موجود گھس بیٹھیے رسوا ہونگے ۔ہمارے قاتل امریکہ، عالمی صیہونزم اور ان کے نوکر بعض عرب حمکران اور ملک میں موجود ان کے ساتھی ہیں ۔

وحدت نیوز(جیکب آباد) مجلس وحدت مسلمین سندھ کے سیکرٹری جنرل علامہ مقصود علی ڈومکی نے حبیب چوک جیکب آباد پر منعقدہ جشن میلاد امام حسین علیہ السلام و حضرت غازی عباس علمدار ع و حضرت امام زین العابدین علیہ السلام سے خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ اہل بیت اطہار ع سے مودت اور ان کی اطاعت و اتباع انسان کی نجات کا باعث ہے۔ شعبان المعظم آل رسول ص کا مہینہ ہے جو عبودیت الہی یاد خدا اور ذکرخدا کے لیے بہترین مہینہ ہے مناجات شعبانیہ معرفت الہی کا خزانہ ہے۔

انہوں نے کہاکہ آج دنیا بھر میں حق و باطل یعنی حسینیت و یزیدیت کا معرکہ جاری ہے۔ یزید عصر کے ہاتھوں ظلم و بربریت جاری ہے ایسے میں ایم ڈبلیو ایم مظلوم کی حامی اور ظالم کی دشمن بن کر میدان عمل میں موجود ہے۔ ایم ڈبلیو ایم آج وطن عزیز پاکستان میں حب الوطنی اتحاد بین المسلمین اور نظام ولایت و امامت کا پرچم لے کر مستضعفین کی نمایندہ جماعت بن چکی ہے۔

وحدت نیوز (سکردو) وطن عزیز پاکستان کے دیرینہ رفیق اور ہمسائیہ اسلامی ملک ایران میں حالیہ تاریخی بدترین سیلابی تباہ کارویوں کے موقع پر اور مشکل کی اس گھڑی میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت بلتستان کے زیرانتظام سیلاب متاثرین کے لیے امدادی مہم کا آغاز کر دیا گیا ہے، اس سلسلے میں یادگار شہداء اسکردو پر امدادی کیمپ لگا دیئے گئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق ایم ڈبلیو ایم جی بی کے زیراہتمام امدادی کیمپ میں آغا علی رضوی نے شرکت کی اور عوام سے اپیل کی ہے کہ انسانی ہمدردی اور اسلامی بھائی چارگی کی بنیاد پر ایرانی عوام کی مدد کرنا تمام مسلمانوں کا اخلاقی اور شرعی فریضہ ہے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ ایرانی عوام ہر طرح کی مشکلات اور مسائل سے نبرد آزما ہوسکتی ہے، لیکن ہماری اخلاقی ذمہ داری ہے کہ مشکل وقت میں ان کا ساتھ دیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں 2010ء میں ہونے والی سیلابی تباہ کارویوں میں ایران کے عوام نے جس طرح مدد کی تھی، وہ قابل تعریف تھی۔

اب وقت آگیا ہے کہ پاکستانی عوام اخلاقی بنیادوں پر ایرانی عوام کی مدد کرے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ دنیا میں جہاں کہیں بھی کوئی انسان مشکل میں ہو، ہمیں اس کی مدد کرنی چاہیئے اور اگر مسلمان ہے تو کوتاہی ہرگز نہیں برتنی چاہیئے۔ ایران کے اندر سیلاب کے موقع پر مختلف مسالک کے درمیان وحدت کا جو مظاہرہ ہوا، وہ سب کی آنکھیں کھولنے کے لیے کافی ہے۔ ہمیں بھی پورے ملک میں مسلکی اختلافات کو پس پشت ڈال کر اسلام کی سربلندی اور پاکستان کے استحکام کے لیے جدوجہد کرنی چاہیئے اور جہاں جہاں مسلمان مشکل حالات میں ہوں، وہاں مدد کرنی چاہیئے۔ چاہے ایران ہو، عراق ہو، فلسطین ہو، نائیجیریا ہو یا کوئی اور اسلامی ملک، ہمیں انکی پکار پر لبیک کہنا چاہیئے اور پاکستان کو الگ ریاست بنانے کا مقصد بھی یہی تھا کہ عالم اسلام کی قیادت سنبھالے۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) رمضان سے قبل ہوشربا مہنگائی نا قابل برداشت ہے ،حکومت ذخیرہ اندوزوں اور مصنوعی مہنگائی کرنے والوں کے خلاف سخت اقدامات کرے ،رمضان المبارک میں عوام کے لئے اشیاءخوردنوش کی سستے داموں فراہمی کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کئے جائیں ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی سیکرٹری سیاسیات سید اسد عباس نقوی نے میڈیا سیل سے جاری بیان میں کیا۔

 انہوں نے کہا کہ مہنگائی سے پسی ہوئی عوام کو مقدس مہینے میں ریلیف دینے کے لئے حکومت ترجیحی بنیادوں پر رمضان المبارک میں خصوصی پیکچ کا اعلان کرے ۔نئی حکومت سے عوام کو بہت امیدیں وابستہ ہیں حکومت بھی عوامی ایشوز پر سنجیدہ اقدامات کو ترجیح دے ۔ادویات کی قیمتوں میں اضافے نے عام آدمی کی زندگی کو مذید مشکل بنادیا تھا تاہم وزیراعظم کی جانب سے پرانی قیمتوں پر ادویات کی فراہمی کا حکم قابل تحسین ہےمعاشی پالیسی کے ثمرات عام تاجر طبقے تک نہیں پہنچ سکے جس سے ان کی مشکلات دن بدن بڑھتی جارہی ہیں معاشی حالات کی بہتری کے لئے کئے جانے والے اقدامات ابھی ناکافی ہیں ۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان نے صوبائی سطح پر انٹراپارٹی انتخابات کا شیڈول جاری کردیاگیاہے،مرکزی سیکریٹریٹ سے جاری اعلامیہ کے مطابق ایم ڈبلیوایم صوبہ بلوچستان کی تنظیم نو 13اور 14اپریل بروز ہفتہ اور اتوار کو کوئٹہ میں، صوبہ پنجاب اور صوبہ جنوبی پنجاب کی تنظیم نو 27اور 28اپریل بروز ہفتہ اور اتوار کو لاہور اور ملتان میں، صوبہ سندھ کی تنظیم نو 4اور 5مئی بروز ہفتہ اور اتوار کو کراچی میں منعقد ہوگی ، جبکہ خیبرپختونخواہ، کشمیر اور گلگت بلتستان کے صوبائی کنونشنز بعد ازماہ مبارک رمضان متوقع ہیں، واضح رہے کہ ایم ڈبلیوایم کے مرکز کی سطح پر انٹراپارٹی الیکشن کے کامیاب انعقاد اور علامہ راجہ ناصرعباس جعفری کےمرکزی سیکریٹری جنرل منتخب ہونے کے بعد تنظیمی ڈھانچے کی تشکیل نو سلسلہ جاری ہے، علامہ راجہ ناصرعباس جعفری نے مرکزی کابینہ کی تشکیل کے پہلے مرحلے میں 6اراکین کے ناموں کا اعلان کردیا ہے، جبکہ دیگر اراکین کی نامزدگی اور صوبوں کے کنونشنز کا انعقاد بھی جلد عمل میں لایا جائے گا۔

وحدت نیوز(آرٹیکل)حضرت عباس علیہ السلام جو "ابوالفضل" اور "علمدار کربلا" کے نام سے مشہور ہیں حضرت علی علیہ السلام اور حضرت ام البنین کے فرزند ہیں۔ حضرت عباس 4 شعبان العمظم سن 26 ہجری قمری میں مدینہ منورہ میں پیدا ہوئے۔حضرت عباس،شیعوں  کے نزدیک،آئمہ (ع) کی اولاد میں اعلی ترین مقام و مرتبت رکھتے ہیں اور اسی اعلی مرتبت کی بنا پرمحرم کا نواں دن آپ سے مختص کیا گیا ہے اور اس روز حضرت عباس(ع) کی عزاداری کی جاتی ہے۔ شیعہ مصادر و منابع میں آپ سے متعلق بہت سے کرامات نقل ہوئی ہیں۔ اسی طرح آپ کو ادب، شجاعت اور سخاوت کا مظہر، وفا کا پیکر اور امام معصوم کی اطاعت میں نمونۂ کاملہ سمجھا جاتا ہے۔آپ کو نہایت خوش چہرہ نوجوان ہونے کے ناطے قمربنی ہاشم کا لقب دیا گیا ہے۔ آپ کربلا میں اپنے بھائی حسین بن علی (ع) کی سپاہ کے علمدار اور سقا تھے اسی بنا پرشیعیان اہلبیت (ع)  کے درمیان علمدار کربلا اور سقائے دشت کربلا کے لقب سے مشہور ہیں۔ حضرت ابو الفضل العباس علیہ السلام اسلامی تاریخ کی پیشانی پر ایک عظیم ترین رہنما اوربہادر ترین جرنیل کی صورت میں ابھر کر سامنے آئے۔

حضرت عباس علیہ السلام کی شجاعت و بہادری اور ان کے تمام فضائل وکمالات کی مثال ونظیر پوری تاریخ بشریت میں نہیں مل سکتی۔ کربلا کے میدان میں حضرت عباس علیہ السلام نے جس عزم وحوصلہ ، شجاعت وبہادری اور ثابت قد می کا مظاہرہ کیا اس کو بیان کرنے کا مکمل حق ادا کرنا نہ تو کسی زبان کے لئے ممکن ہے اور نہ ہی کسی قلم میں اتنی صلاحیت ہے کہ وہ اسے لکھ سکے۔ جناب عباس علیہ السلام نے اپنے مضبوط ترین ارادہ اور عزم و حوصلہ کے اظہار سے ابن زیاد ملعون کے لشکر کو نفسیاتی طور پر بالکل ایسے ہی بھاگنے پر مجبور کر دیا جیسے انھوں نے میدان جنگ میں تنہا ان ملعونوں کو اپنی تلوار اور شجاعت سے بھاگنے پر مجبور کردیا تھا۔

آج تک لوگ حضرت عباس علیہ السلام کی بہادری اور شجاعت کو مکمل عقیدت و احترام اور پورے جوش وجذبہ کے ساتھ یاد کرتے ہیں۔ آج تک کوئی ایسا شخص نہیں دیکھا گیا کہ جو اتنے زیادہ دکھ درد اور غموں سے چور ہونے کے باوجود ہر طرح کے اسلحہ سے لیس ہزاروں فوجیوں پر اکیلا ہی حملہ کر کے انھیں میدان جنگ سے بھاگنے پر مجبور کر دے۔

مؤرخین کہتے ہیں کہ میدان کربلا میں جب بھی حضرت عباس علیہ السلام دشمن کی فوجوں پر حملہ کرتے تو ہر سامنے آنے والا موت کے گھاٹ اترتا اور فوجی خوف اور دہشت سے ایک دوسرے کو کچلتے ہوئے یوں بھاگتے جیسے سب کو یقین ہو کہ موت ان کے پیچھے آرہی ہے اور ان کی کثرت ان کو کوئی فائدہ نہ پہنچا سکتی۔

حضرت عباس علیہ السلام کی شجاعت وبہادری اور ہر فضیلت و کمال فقط مسلمانوں کے لئے باعث فخر نہیں ہے بلکہ ہر وہ انسان جس کے اندر معمولی سی بھی انسانیت ہے وہ جناب عباس علیہ السلام کے فضائل و کمالات پہ ایمان رکھنے پہ فخر محسوس کرتا ہے اور اپنے آپ کو جناب عباس علیہ السلام کا عقیدت مند کہنا اپنے لئے باعث افتخار سمجھتا ہے۔

حضرت عباس علیہ السلام عظیم ترین صفات اور فضائل کا مظہر تھے شرافت ، شہامت ، وفا ، ایثار اور دلیری کا مجسم نمونہ تھے۔ واقعہ کربلا میں جناب عباس علیہ السلام نے مشکل ترین اور مصائب سے بھرے لمحات میں اپنے آقاومولا امام حسین علیہ السلام پر اپنی جان قربان کی اور مکمل وفا داری کا مظاہرہ کیا اور مصائب کے پہاڑوں کو اپنے اوپر ٹوٹتے ہوئے دیکھا لیکن ان کے عزم وحوصلہ، ثابت قدمی اور وفا میں ذرا برابر بھی فرق نہ پڑا اور یہ ایک یقینی بات ہے کہ جن مصائب کا سامنا جناب عباس علیہ السلام نے کیا ان پر صبر کرنا اور ثابت قدم رہنا فقط اس کے لئے ہی ممکن ہے کہ جو خدا کا مقرب ترین بندہ ہو اور جس کے دل کو خدا نے ہر امتحان کے لئے مضبوط بنا دیا ہو۔

حضرت عباس علیہ السلام نے اپنے بھائی حضرت امام حسین علیہ السلام کی خاطر جتنی بھی قربانیاں دیں وہ اس لئے نہیں تھیں کہ امام حسین علیہ السلام ان کے بھائی ہیں بلکہ حضرت عباس علیہ السلام نے امام حسین علیہ السلام کو اپنا حقیقی امام، خدائی نمائندہ اور عین اسلام سمجھتے ہوئے ان کی خاطرتمام تر مصائب و مشکلات کو برداشت کیا اور اپنی جان ان پر قربان کر دی اور اس بات کا انھوں نے کئی بار اظہار بھی کیا اور یہی وجہ ہے کہ حضرت عباس علیہ السلام جب بھی امام حسین علیہ السلام کو پکارتے یا ان کا ذکر کرتے تو انھیں بھائی کی بجائے اپنا مولاو آقا اور امام کہتے۔ پس ادب کا کوئی ایسا رنگ نہیں جو حضرت عباس علیہ السلام نے امام حسین علیہ السلام کے حق میں اختیار نہ کیا ہو، کوئی ایسی نیکی نہیں جو انہوں نے امام حسین علیہ السلام کے ساتھ نہ کی ہو، کوئی ایسی قربانی نہیں کہ جو انہوں نے اپنے آقا امام حسین علیہ السلام کے قدموں پر نچھاور نہ کی ہو۔ جانثاری وفا،اور ایثار کی وہ مثال قائم کی جس کی نظیر تاریخ بشریت میں نہیں مل سکتی، جب حضرت عباس علیہ السلام نے تن و تنہا ہزاروں کے لشکر پر حملہ کر کے فرات کو دشمن سے خالی کیا تو تین دن کی پیاس اور شدید جنگ کرنے کے باوجود بھی فقط اس لیے پانی نہ پیا کہ امام حسین علیہ السلام اور ان کے بچے اور اہل و عیال پیاسے تھے جناب عباس علیہ السلام کی وفا و غیرت یہ برداشت نہیں کر سکتی تھی کہ امام حسین علیہ السلام اور ان کے اہل و عیال تو پیاسے ہوں اور وہ پانی پی لیں لہٰذا اپنے آقا اور بچوں کی پیاس کو یاد کرکے بہتے دریا سے پیاسے واپس آئے۔ دنیا کی پوری تاریخ کو ورق ورق چھاننے سے بھی اس طرح کی وفا کی نظیر نہیں مل سکتی کہ جس کا مظاہرہ جناب عباس علیہ السلام نے میدانِ کربلا میں کیا۔جناب عباس علیہ السلام نے ان بلند ترین مقاصد اور عظیم ترین اصولوں کی خاطر شہادت کو گلے لگایا کہ جن کی خاطر امام حسین علیہ السلام نے قیام کیا تھا۔

 پس جناب عباس علیہ السلام نے انسانیت کی آزادی،عدل و انصاف کے فروغ، لوگوں کی فلاح و بہبود، قرآنی احکام کی نشر و اشاعت اور پوری انسانیت کو ذلت کے گڑھے سے نکال کرعزت و شرف اور سعادت دلانے کے لیے اپنے بھائی و آقا امام حسین علیہ السلام کی طرح شہادت کو اختیار کیا ۔جناب عباس علیہ السلام نے حریت و آزادی اور کرامت و شرف کی مشعل روشن کی اور عزت و سعادت کے میدان میں اترنے والے شہداء کے قافلوں کی قیادت کی اور ظلم و جور کی چکی میں پسنے والے مسلمانوں کی مدد و نصرت کو اپنا فریضہ سمجھا۔
جناب عباس علیہ السلام پوری انسانیت کے لیے بھیجے گئے خدائی دستور اور زمین کی ترقی کے لائحہ عمل کی خاطر میدانِ جہاد میں اترے۔ پس جناب عباس علیہ السلام نے اپنے بھائی امام حسین علیہ السلام کے ساتھ مل کر ایسا عظیم انقلاب برپا کیا کہ جس کے ذریعے حقیقی اسلام اور بنی امیہ اور سقیفہ کے خود ساختہ اسلام میں فرق واضح ہو گیا اور اللہ تعالیٰ کی کتاب کے اصل وارث کے بارے میں ہر شک و شبہ ختم ہو گیا اور سقیفہ کے بنائے ہوئے ظلم و جور کے قلعے پاش پاش ہو گئے۔

حضرت ابو الفضل عباس علیہ السلام کا کعبہ کی چھت پر عظیم الشان خطبہ
«بسم الله الرّحمن الرّحیم»
«اَلحَمدُ لِلّهِ الَّذی شَرَّفَ هذا (اشاره به بیت الله الحَرام) بِقُدُومِ اَبیهِ، مَن کانَ بِالاَمسِ بیتاً اَصبَح قِبلَةً. أَیُّهَا الکَفَرةُ الفَجَرة اَتَصُدُّونَ طَریقَ البَیتِ لِاِمامِ البَرَرَة؟ مَن هُوَ اَحَقُّ بِه مِن سائِرِ البَریَّه؟ وَ مَن هُوَ اَدنی بِه؟ وَ لَولا حِکمَ اللهِ الجَلیَّه وَ اَسرارُهُ العِلّیَّه وَاختِبارُهُ البَریَّه لِطارِ البَیتِ اِلیه قَبلَ اَن یَمشیَ لَدَیه قَدِ استَلَمَ النّاسُ الحَجَر وَ الحَجَرُ یَستَلِمُ یَدَیه وَ لَو لَم تَکُن مَشیَّةُ مَولایَ مَجبُولَةً مِن مَشیَّهِ الرَّحمن، لَوَقَعتُ عَلَیکُم کَالسَّقرِ الغَضبانِ عَلی عَصافِیرِ الطَّیَران.اَتُخَوِّنَ قَوماً یَلعَبُ بِالمَوتِ فِی الطُّفُولیَّة فَکَیفَ کانَ فِی الرُّجُولیَّهِ؟ وَلَفَدَیتُ بِالحامّاتِ لِسَیِّد البَریّاتِ دونَ الحَیَوانات.هَیهات فَانظُرُوا ثُمَّ انظُرُوا مِمَّن شارِبُ الخَمر وَ مِمَّن صاحِبُ الحَوضِ وَ الکَوثَر وَ مِمَّن فی بَیتِهِ الوَحیُ وَ القُرآن وَ مِمَّن فی بَیتِه اللَّهَواتِ وَالدَّنَساتُ وَ مِمَّن فی بَیتِهِ التَّطهیرُ وَ الآیات.وَ أَنتُم وَقَعتُم فِی الغَلطَةِ الَّتی قَد وَقَعَت فیهَا القُرَیشُ لِأنَّهُمُ اردُوا قَتلَ رَسولِ الله صلَّی اللهُ عَلَیهِ وَ آلِه وَ أنتُم تُریدُونَ قَتلَ ابنِ بِنتِ نَبیّکُم وَ لا یُمکِن لَهُم مادامَ اَمیرُالمُؤمِنینَ (ع) حَیّاً وَ کَیفَ یُمکِنُ لَکُم قَتلَ اَبی عَبدِاللِه الحُسَین (ع) مادُمتُ حَیّاً سَلیلاً؟ تَعالوا اُخبِرُکُم بِسَبیلِه بادِروُا قَتلی وَاضرِبُوا عُنُقی لِیَحصُلَ مُرادُکُم لابَلَغَ الله مِدارَکُم وَ بَدَّدَا عمارَکُم وَ اَولادَکُم وَ لَعَنَ الله عَلَیکُم وَ عَلی اَجدادکُم.

ترجمہ
آپ علیہ السلام نے یہ خطبہ امام حسین علیہ السلام کی ۸ ذی الحجہ سن ۶۰ ہجری کو مکہ سے کربلا روانگی کے موقع پر خانہ کعبہ کی چھت پر جلوہ افروز ہو کر ارشاد فرمایا:حمد ہے اللہ کے لیے جس نے اسے (کعبے کو ) میرے مولا (امام حسینؑ) کے والد گرامی (امام علیؑ) کے قدم سے شرف بخشا جو کہ کل تک پتھروں سے بنا ایک کمرہ تھا ان کے ظہور سے قبلہ ہو گیا ۔اے بد ترین کافروں اور فاجروں تم اس بیت اللہ کا راستہ نیک اور پاک لوگوں کے امام کے لیے روکتے ہو جو کہ اللہ کی تمام مخلوق سے اس کا زیادہ حق دار ہے اور جو اس کے سب سے زیادہ قریب ہے اور اگر اللہ کا واضح حکم نہ ہوتا اور اسکے بلند اسرار نہ ہوتے اور اس کا مخلوق کو آزمائش میں ڈالنا نہ ہوتا تو یہی اللہ کا گھر خود اڑ کر میرے مولاکے پاس آجاتا لیکن میرےکریم مولانے خود اس کے پاس آکر اس کوعظمت بخشی بے شک لوگ حجراسود کو چومتے ہیں اور حجر اسود میرے مولا کے ہاتھوں کو چومتا ہے ۔ اللہ کی مشیت میرے مولاؑ کی مشیت ہے اور میرے مولا کی مشیت اللہ کی مشیت ہے خدا کی قسم اگر ایسا نہ ہوتا تو میں تم پر اس طرح حملہ کرتا جیسے کہ عقاب غضبناک ہو کر اڑتا ہوا چڑیوں پر حملہ کرتا ہے اور تم کو چیر پھاڑ دیتا کیا تم ایسے لوگوں سے خیانت کرتے ہو جو بچپن ہی سے موت سے کھیلتے ہوں اور کیا عالم ہوگا ان کی بہادری کا جب کے وہ عالم شباب میں ہوں ؟ میں قربان کر دوں اپنا سب کچھ اپنے مولاءپر جو کہ اس پوری کائنات پر بسنے والے انسانوں اور حیوانوں کا سردار ہے ۔ اے لوگوں ! تمہاری عقلوں کو کیا ہو گیا ہے کیا تم غور و فکر نہیں کرتے ( کیا موازنہ ہے خاندان یزیدلعنہ کا خاندان رسالتﷺ سے ؟ ) ایک طرف شراب پینے والے ہیں اور دوسری طرف حوض کوثر کے مالک ہیں ایک طرف وہ ہیں جن کا گھر لہو لہب اور سارے جہان کی نجاستوں کی آماجگاہ ہے اور دوسری طرف پاکیزگی کے جہان اور آیات قرانیہ ہیں اور وہ گھر جس میں وحی اور قرآن ہے اور تم اسی غلطی میں پڑ گئے ہو جس میں قریش پڑے تھے کیونکہ انہوں نے رسول اللہ ﷺ کو قتل کرنے کا ارادہ کیا تھا اور تم اپنے نبیﷺ کے نواسے کو قتل کرنے کا ارادہ کر رہے ہو ۔ قریش اپنے ناپاک ارادوں میں کامیاب نہ ہو سکے کیونکہ امیر المومنینؑ کی ہیبت و جلال کے آگے ان کی ایک نہ چل سکی اور کیسے ممکن ہوگا تمہارے لیے ابا عبداللہ الحسینؑ کا قتل جب کہ اسی علی ؑکا بیٹا رسول ﷺکے بیٹے کی حفاظت پر مامور ہے اگر ہمت ہے توآؤ میں تمہیں اس کا راستہ بتاتا ہوں میرے قتل کی کوشش کرو اور میری گردن اڑاؤ تا کہ تم اپنی مراد پا سکو اللہ تمہارے مقصد کو کبھی پورا نہ کرے اور تمہارے آباء و اولاد کو تباہ کرے اور لعنت کرے تم پر اور تمہارے آباء و اجداد پر ۔


تحریر : ظہیرالحسن کربلائی

وحدت نیوز(سخی سرور) مجلس وحدت مسلمین ضلع ڈیرہ غازیخان کی جانب سے ولادت باسعادت حضرت امام حسین علیہ السلام اور حضرت عباس علمدار علیہ السلام کے موقع پر سخی سرور میں جشن کا اہتمام کیا گیا، جشن سے مولانا جعفر سروری نے خطاب کیا، اُنہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ امام حسین علیہ السلام کی ہستی عالم اسلام کیلئے نقطہ اتحاد ہے، آج عالم اسلام خوشیاں منا رہا ہے، آج جس طرح ہم جشن منا رہے ہیں، اُسی طرح ضرورت اس بات کی ہے کہ اُن کی سیرت پر چلیں اور اُن کے اُسوہ حسنہ پر عمل پیرا ہوں، جشن کے اختتام پر کیک بھی کاٹا گیا۔ اس موقع پر سخی سرور یونٹ کے سیکرٹری جنرل زوہیب یونس، کاظم رضا، شیخ عامر حسین، خالد حسین، ضلعی میڈیا سیکرٹری جہانزیب حیدر اور دیگر موجود تھے۔ بعدازاں شرکائے جشن نے دربار عالیہ حضرت سخی سرور پر حاضری دی، چادر چڑھائی اور مولانا جعفر سروری نے خصوصی دُعا کرائی۔

Page 6 of 930

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree