The Latest

وحدت نیوز(اسلام آباد)  مجلس علمائے شیعہ پاکستان کے سربراہ علامہ مرزا یوسف حسین نے کہا ہے کہ امت مسلمہ کا اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے، اتحاد جہاں جہاں ہوگا وہاں کامیابی نصیب ہوگی، ان خیالات کا اظہار انہوں نے مجلس وحدت مسلمین کے زیراہتمام سیمینار بعنوان ’’وحدت اسلامی اور استحکام پاکستان‘‘ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ علامہ مرزا یوسف نے کہا کہ مغرب کے لئے سب سے بڑا خطرہ اسلام ناب محمدی ہے، امریکہ اور اسکے حواری اسلام محمدی کے خلاف سازشیں کر رہے ہیں، اسلام محمدی کے لئے مسلمانوں کو متحد ہونا ہوگا، ان کا کہنا تھا کہ متحد ہو کر اسلام دشمن قوتوں کی سازشوں کو ناکام بنایا جا سکتا ہے، انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیا انتالیس رکنی اسلامی ممالک کا اتحاد دنیا بھر میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم کے خلاف آواز اٹھانے کے لئے بنایا گیا ہے؟، جبکہ حقیقت یہ ہے کہ ایسا نہیں ہے بلکہ اسلام دشمن قوتیں اسلام کو نقصان پہنچانے کے لئے سازشوں میں مصروف ہیں، انہوں نے کہا کہ ہم سب کو ملکر ان سازشوں کو ناکام بنانا ہوگا، ہمیں اپنے ہمسایہ ملک کے انقلاب اسلامی کو دیکھنا ہوگا اور اسکے لئے کی گئی جدوجہد کو اپنانا ہوگا تب ہی ہم کامیابی حاصل کر سکتے ہیں۔

وحدت نیوز (اسلام آباد)  جمعیت علمائے پاکستان نیازی کے سربراہ پیر معصوم نقوی نے کہا ہے کہ ہمارے حکمران اور مقتدر حلقوں کی غلط پالیسیوں کے سبب جنرل ضیاء کے دور میں ملک میں مخصوص طبقے کو اکثریت پر مسلط کیا گیا، جس کا خمیازہ قوم آج بھگت رہی ہے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے مجلس وحدت مسلمین کے زیراہتمام سیمینار بعنوان ’’وحدت اسلامی اور استحکام پاکستان‘‘ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ امت مسلمہ متحد ہے، اسی وجہ سے پاکستان سلامت ہے، ورنہ ریاستی اداروں کی سرپرستی میں پالے تکفیری گروہ نے ملک دشمنوں سے ملکر ملک و قوم پر وار کرنے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ مجلس عمل کے قیام کا اصل مقصد نظریہ پاکستان کی مخالف قوتوں کا تحفظ ہے، جسے ہم کبھی قبول نہیں کریں گے، سیمنار سے خطاب کرتے ہوئے جمعیت علمائے پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل ڈاکٹر امجد چشتی نے کہا کہ اتحاد امت کے لئے ضروری ہے کہ تکفیری قوتوں سے قومی سطح پر لاتعلقی کا اظہار کیا جائے، حکمران اور مقتدر ادارے ان تکفریوں کیخلاف بیانیہ لائیں اور واضح کریں کہ ان کا اسلام اور پاکستان سے کوئی تعلق نہیں۔

وحدت نیوز (اسلام آباد)  جمیعت علمائے پاکستان و ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے صدر صاحبزادہ ابوالخیر محمد زبیر نے کہا ہے کہ دشمن قوتیں عالم اسلام کو دست و گریبان دیکھنا چاہتی ہیں۔ امت مسلمہ کا باہمی اخوت و اتحاد وہ واحد ہتھیار ہے، جس سے اسلام دشمنون کو شکست دی جا سکتی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مجلس وحدت مسلمین کے زیراہتمام سیمینار بعنوان ’’وحدت اسلامی اور استحکام پاکستان‘‘ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کے ہاتھوں مسلمانوں کا قتل عام یہود و نصاریٰ کی سازش ہے۔ یمن کے اندر پیسہ پھینکا جا رہا ہے اور جنگ مسلط کی جا رہی ہے۔ صاحبزادہ ابوالخیر زبیر کا کہنا تھا کہ سعودی ولی عہد کا عالمی ذرائع ابلاغ کے سامنے اس بات کا اقرار کہ امریکہ کی ایماء پر امت میں اختلاف کو ہوا دینے کے لئے سعودی عرب بےدریغ سرمایہ لٹاتا رہا، سب کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہود و ہنود کا مقابلہ کرنے کے لئے تمام مذہبی قوتوں کو متحد ہونا ہوگا۔ پارلیمنٹ کے اندر یہود و نصاریٰ کے ایجنٹ موجود ہیں، جو دہشت گرد تکفیریوں کی سرپرستی کر رہے ہیں۔ جب تک دہشت گردوں کے ان سیاسی سہولت کاروں پر ہاتھ نہیں ڈالا جاتا، تب تک ملک سے دہشت گردی کا مکمل خاتمہ ممکن نہیں، ان سہولت کاروں کا ہم مل کر محاسبہ کریں گے۔

وحدت نیوز (اسلام آباد)  ملی یکجہتی کونسل کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل ثاقب اکبر نے کہا ہے کہ وحدت امت کا مسئلہ مقامی نہیں بلکہ عالمی ہے اور اس کے دشمن بھی عالمی ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مجلس وحدت مسلمین کے زیراہتمام سیمینار بعنوان ’’وحدت اسلامی اور استحکام پاکستان‘‘ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کیلئے امریکہ، اسرائیل اور انڈیا کا سہہ فریقی منحوس گٹھ جوڑ وجود میں آچکا ہے، جس کا مقابلے کیلئے علاقائی بلاک کے وجود کی اشد ضرورت ہے، شیطانی اور ناپاک سہ فریقی اتحاد کا اصل سرغنہ امریکہ ہے، جو اسرائیل اور ہندوستان کی کمانڈ کر رہا ہے۔ گذشتہ روز امریکی سفارت کی جانب سے پاکستانی شہری کو ٹکر مار کر قتل کرنے کے اقدام پر ثاقب اکبر کا کہنا تھا کہ پاکستان میں سفارتی استثنٰی کے نام پر قاتلوں کو کھلی چھٹی نہیں دی جا سکتی۔ 13 اپریل کو بعد از نماز جمعہ مظلوم فلسطینیوں اور کشمیریوں کی حمایت میں آبپارہ میں مظاہرہ کیا جائے گا۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) پاکستان عوامی تحریک کے سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈا پور نے کہا ہے کہ مجلس وحدت مسلمین پاکستان نے اتحاد امت کے لئے جو کردار اد کیا ہے، اسکی مثال نہیں ملتی، مظلوموں کی حمایت اور ظالموں کیخلاف قیام کا درس تمام سیاسی و دینی جماعتوں کو اسی جماعت نے دیا، سانحہ ماڈل ٹاون میں مظلوم شہداء کے خاندانوں کا ساتھ نبھانے میں جو کردار مجلس وحدت مسلمین کے قائدین نے ادا کیا، اسے ہم زندگی بھر فراموش نہیں کرسکتے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایم ڈبلیو ایم کے زیراہتمام سیمینار بعنوان ’’وحدت اسلامی اور استحکام پاکستان‘‘ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ آپ لوگوں کی استقامت کا نتیجہ ہے کہ آج چیف جسٹس آف پاکستان نے تنزیلہ شہیدہ کی بیٹی بسمہ کو بلاکر یہ یقین دہانی کرائی ہے کہ شہدائے ماڈل ٹاون کو انصاف دلا کر رہوں گا، آج اس سمینار میں تمام مکاتب فکر کی نمائندگی اس بات کی غمازی ہے کہ قوم متحد ہے اور چند شرپسندوں کے ہاتھوں وطن عزیز کو یرغمال بننے نہیں دیں گے۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) سنی اتحاد کونسل کے چیئرمین صاحبزادہ حامد رضا نے کہا ہے کہ ہمارے بارے میں اداروں نے منفی رپورٹنگ کی اور ہمارے خلاف آپریشن ہوتے رہے اور جن اداروں میں دہشتگرد تیار کئے جاتے ہیں، انہیں تحفظ فراہم کیا جاتا رہا۔ اگر حکومتی سطح پر نیک نیتی سے کوشش کی جاتی تو شیعہ سنی قتل عام پر آغاز سے ہی قابو پا لیا جاتا، لیکن اسے دانستہ طور پر کھلے عام چھوٹ دی گئی۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین کے زیراہتمام ’’وحدت اسلامی و استحکام پاکستان‘‘ سیمینارسے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ حامد رضا کا کہنا تھا کہ عوامی تحریک کا ساتھ نواز شریف کی مخالفت میں نہیں دیا تھا بلکہ یہ ظلم کے خلاف تھا۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی قابل مذمت ہے، چاہے وہ کسی امام بارگاہ میں ہو، مسجد میں ہو، خانقاہ میں ہو یا پھر اقلیتوں کی کسی عبادت گاہ میں دہشتگردی ہو۔ ملک میں بہت سارے خطباء غیر ملکی ایجنسیوں کی خوشنودی حاصل کرنے کے لئے مسلمانوں میں اشتعال پیدا کر رہے ہیں۔ ایسے عناصر سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے۔ وطن عزیز کی بقاء صرف اور صرف نظام مصطفٰے میں ہے۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین پاکستان کی سیکرٹری تعلیم و تربیت محترمہ سیدہ نرگس سجاد جعفری کا کہنا ہے جناب زہراء (س) کا کردار عصر ظہور میں خواتین کےلیےشعل راہ ہے آپ راہ ولایت کی پہلی شھیدہ ہیں _ اسلام آباد کے علاقے ترلائی کلاں میں خواتین کی نشست سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جناب زہراء(س) نے ہر میدان میں کامل نمونہ عمل پیش کیا. ظہور  امام(ع) کی زمینہ سازی میں خواتین کا کردار نہایت اہمیت کا حامل ہے خانم نرگس سجاد جعفری کا کہنا تھا جناب زہراء (س) نے ہر حال میں ایک خاتون کے کردار کو متعین کردیا ہے. انھوں نے کہاکہ ایم ڈبلیو ایم شعبہ خواتین جناب زہراء (س) کو اسوہ قرار دیتے ہوئے خواتین کی تعلیم و تربیت کر رہا ہے، خواتین کی نشست میں محترمہ سیدہ نرگس سجاد جعفری نے تنظیم کی اہمیت پر گفتگو کی، اس موقع پرمحترمہ قندیل کاظمی اور محترمہ فروا بھی موجود تھیں۔

وحدت نیوز(حیدرآباد)  مجلسِ وحدت مسلمین شعبہ خواتین ضلع حیدرآباد کے زیر نگرانی فلاحی پروجیکٹ "بیتِ زہرہ (س)" کو کامیابی کی راہ پر گامزن رہتے ہوئے ۴ اپریل ۲۰۱۸ کو ایک سال ہوگیا ۔اس موقعے پر بیت زہرا ؑ مینیجمنٹ ٹیم نے سالگرہ مناتے ہوئے ایک ون ڈش کا پروگرام مرتب کیا جس میں بیت زہرا کی مینجمینٹ ،کارکن و مختلف کورسز کے اساتذہ نے بھر پور شرکت ۔ پروگرام میں بچیوں و خواتین نے منقبت اہل بیت (ع۔س) پیش کی بعداز مہمانان نے اس پروجیکٹ کے بارے میں اپنی اپنی رائے کا اظہار کیا ۔محترمہ عابدہ حسینی فاضلہ قم و ممبر ایڈوائزری بورڈ بیت زہرا ؑنے بیت زہرا کی ٹیم اور ادارے کی احسن کارکردگی کے بارے اپنا اظہار خیال پیش کیا۔ ذاکرہ اہل بیتؑ محترمہ کنول بتول نے مولا علی مشکل کشاءکی شان میں لکھی گئی نظم پیش کی ، محترمہ یاض فاطمہ انچارج بیت زہراؑ نے بھی اپنی رائے پیش کی ۔آخر میں محترمہ عظمیٰ زہرا تقوی سیکریٹری جنرل ایم ڈبلیو ایم حیدرآباد و انچارج ایڈوائزری بورڈ بیت زہرا ؑنے تمام وولینٹرز کی کارکردگی کو سراہا اور ادارے کو مزید کامیابی کی راہوں پہ لے جانے کے لیے ایک مختصر حوصلہ افزا ءتقریر کی ۔آخر میں محترمہ عظمی تقوی اور محترمہ عابدہ حسینی نے کیک کاٹا ۔پروگرام کا باباقائدہ اختتام منقبت امام زمانہ و دعاء سلامتی امام زمانہ (عج) سے ہوا۔

 وحدت نیوز(کوئٹہ)  مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین ضلع کوئٹہ کے زیر اہتمام مسجدو امام بارگاہ خاتم الانبیاء ص میں جشنِ مولود کعبہ کا شاندار انعقاد کیا گیا، جسمیں ایم ڈبلیوایم شعبہ خواتین کی عہدیداران ، کارکنان اورعلاقائی خواتین نے بڑی تعداد میں شرکت کی، اس موقع پرمختلف مقررین نے سیرت امیر المومنین حضرت علی ابن ابی طالب ؑ پر تفصیلی روشنی ڈالی جبکہ خواتین اور بچیوں نے بارگاہِ اقدس میں منقبت کی صورت نذرانہ عقیدت پیش کیا۔پروگرام کے اختتام پر کیک کاٹا ۔

عقد موقت کے بارے میں ایک اجمالی نظر

وحدت نیوز (آرٹیکل)  اسلام  ایک عالمی اورابدی دین ہے جس میں انسان کی فردی و اجتماعی ضرورتوں کو مد نظر رکھا گیا ہے ۔انسان کی فطری ضرورتوں میں سے ایک  ازدواج ہے ۔یہ ضرورت اس وقت پوری ہوگی جب وہ کسی سےشادی کرے ۔قرآن کریم نےمرد و عورت کی تخلیق کو خدا کی نشانی اور ان کے ایک دوسرے کے ساتھ شادی کرنے کو مودت و رحمت قرار دیا ہے ۔ارشاد رب العزت ہو رہاہے:{ وَ مِنْ ءَايَاتِہِ أَنْ خَلَقَ لَکمُ مِّنْ أَنفُسِکُمْ أَزْوَاجًا لِّتَسْکُنُواْ إِلَيْہَا وَ جَعَلَ بَيْنَکُم مَّوَدَّۃً وَ رَحْمَۃً  إِنَّ فیِ ذَالِکَ لاَيَاتٍ لِّقَوْمٍ يَتَفکَّرُون}1اور اس کی نشانیوں میں سے یہ بھی ہے کہ اس نے تمہاراجوڑا تمہیں میں سے پیدا کیا ہےتاکہ تمہیں اس سے سکون حاصل ہو اور پھر تمہارے درمیان محبت اور رحمت قراردی ہے کہ اس میں صاحبان فکر کے لئے بہت سی نشانیاں پائی جاتی ہیں ۔ اس آیہ کریمہ میں  شادی کی بعض حکمتوں کی طرف اشارہ ہوا ہے۔ازداوجی زندگی سے منسلک ہونے کے بعد انسان کو فکری و روحی سکون مل جاتاہے ۔ شادی کرنے سےنسل انسانی جاری رہتی ہے اور انسانی معاشرے وجود میں آتے ہیں ۔قرآن اس سلسلے میں کہتاہے :{وَ اللّہ  ُ جَعَلَ لَکُم مِّنْ أَنفُسِکمُ أَزْوَاجًا وَ جَعَلَ لَکُم مِّنْ أَزْوَاجِکُم بَنِينَ وَ حَفَدَۃً وَ رَزَقَکُم مِّنَ الطَّيِّبَاتِ} 2 اور اللہ نے تمہارے لئے تمہاری جنس سے بیویاں بنائیں اور اس نےتمہاری ان بیویوں سے تمہیں بیٹے اور پوتے عطا کیےاور تمہیں پاکیزہ چیزیں عطا کیں ۔شادی کرنےسےعقلی و معنوی مقاصد حاصل ہونےکےساتھ ساتھ انسان کی نفسانی خواہشات بھی پوری ہو تی ہیں۔چنانچہ پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نےفرمایا:{من تزوج فقد احرزنصف دینہ}جس نےشادی  کی اس نے اپنا  نصف دین بچا لیا ۔ آپ ؐ نے شادی کو بہترین عمل قرار دیا اور فرمایا:{ما بنی فی الاسلام بناء احب الی الله من التزویج}خدا کےنزدیک اسلام میں سب سےبہترین بنیاد ازدواجی زندگی کی بنیاد ہے۔

اگرہم انسان کی زندگی کا مطالعہ کریں توہم اس حقیقت کو درک کر سکتے ہیں کہ انسان کےلئے دو قسم کی شادیوں کی ضرورت ہے ایک دائمی شادی اور دوسری موقتی شادی۔دائمی شادی عام حالتوں  کےلئے ہےجبکہ موقتی شادی غیر معمولی حالات  کے پیش نظر جیسے اگرکوئی طولانی  مدت  کےلئےسفر میں جائےاور بیوی ساتھ نہ ہو ۔اسی طرح جنگ اور مختلف حوادث میں جو عورتیں بیوہ ہو جاتی ہیں  ۔علاوہ ازیں دائمی شادی  کے لئےبہت زیادہ اخراجات کی ضرورت ہوتی ہے   جبکہ موقتی شادی  کے لئے اتنےاخراجات کی ضرورت نہیں ہوتی ۔انسان کی جنسی خواہشات کو پورا کرنے  کےلئےاسےشادی کرنےکی ضرورت ہے اگرموقتی شادی کےذریعے اس کی یہ خواہش پوری  نہ ہو تو وہ ناجائز روابط کے ذریعے اسےپوری کرنےکی کوشش کرے گا جس سے انسانی معاشرے میں اخلاقی برائی پھیل جائی گی اور معاشرہ تباہ و بربادہو جائے گا۔

دین مقدس اسلام نے انسان کی اس ضرورت کو مد نظر رکھتے ہوئے دو قسم کی شادیوں کو جائز قرار دیا ہے ۔ایک دائمی شادی اوردوسری موقتی شادی۔ دائمی شادی کے بارے میں قرآن کریم کہتاہے :{ وَ إِنْ خِفْتُمْ أَلَّا تُقْسِطُواْ فیِ الْيَتَامی فَانکِحُواْ مَا طَابَ لَکُم مِّنَ النِّسَاءِ مَثْنیَ وَ ثُلَاثَ وَ رُبَاعَ  فاِنْ خِفْتُمْ أَلَّا تَعْدِلُواْ فَوَاحِدَۃ}3اور اگر یتیموں کے بارے میں انصاف نہ کر سکنےکا خطرہ ہے تو جو عورتیں تمہیں پسند ہیں دو،تین ،چار  ان سےنکاح کر لو اور اگر ان میں بھی انصاف نہ کر سکنے کا خطرہ ہے تو پھر ایک ہی عورت {کافی ہے}۔

قرآن کریم عقد موقت یا متعہ کےبارے میں کہتاہے:{ فَمَا اسْتَمْتَعْتُم بِہِ مِنہنَّ فَاتُوہُنَّ أُجُورَہُنَّ فَرِيضۃ}4

پھر جن عورتوں سے تم نے متعہ کیا ہے ان کا طے شدہ مہر بطورفرض ادا کرو ۔لفظ متعہ عرف،شرع اور شیعہ وسنی فقہاء کےنزدیک نیز روایات میں عقد موقت  کے معنی میں ہے۔مشہور مفسر جناب طبرسی مجمع البیان میں اسی آیت  کے ذیل میں فرماتے ہیں:اس آیت  کے  متعلق دو نظریےپائے جاتے ہیں :1۔ بعض لوگوں  نےاستمتاع سےمراد لذت جوئی  لیا ہے  اور بطور دلیل بعض اصحاب اور تابعین  کے عمل کو پیش کیا ہے ۔2۔ بعض لوگوں نے استمتاع سےمراد عقد موقت لیا ہے  اور بطوردلیل ابن عباس، سدی ،ابن مسعوداور تابعین کی ایک جماعت کو پیش کیا ہے  جو  استمتاع کوعقد موقت سے تفسیر کرتے تھے۔ ان دو نظریوں میں سے دوسرےنظریے کی صحت واضح ہے اس لئے کہ عرف و شرع  میں متعہ اور استمتاع سے مراد عقدموقت ہے ۔اس کے علاوہ مہر کا ادا کرنا لذت اٹھانے پر منحصر نہیں ہے۔ بنابرین آیہ کریمہ متعہ پر دلالت کرتی ہے کیونکہ :1۔ اس آیت سے  پہلی والی آیتوں میں عقد دائمی اور اس کے مہریہ کا حکم بیان ہوا ہے لہذا اسےدوبارہ تکرار کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے  ۔2۔دائمی شادی میں جونہی صیغہ عقد جاری ہو مہر شوہر پر واجب ہوتا ہے  اور اگر عورت ہمبستری سے پہلے اس کامطالبہ کرے تو مہر  دینا واجب ہے جبکہ مذکورہ آیت  کےمطابق شوہر پر مہر اس وقت واجب ہوگا جب اس نے اپنی بیوی سے ہمبستری کی ہو لہذا آیت کا مفہوم یہ ہے کہ جب عورتوں سے ہمبستری کرنا تو ان کا مہر ادا کرنا۔5اس نظریہ پر یہ اعتراض ہے کہ :مہریہ کاا دا کرنا عقد پرمنحصر ہے یعنی جیسےہی عقد پڑھ لیاگیا ،عورت اپنا تمام مہر مانگ سکتی ہے اور اس میں ہمبستری کی کوئی شرط نہیں ہے البتہ اگر دخول سے پہلے طلاق ہو جائے تونصف مہر دینا ہو گا ۔

ائمہ اہل بیت علیہم السلام کی احادیث  6کےعلاوہ اہل سنت نے بعض اصحاب اور تابعین سےوقتی شادی کےبارےمیں احادیث نقل کی ہیں۔ابن عباس،ابی بن کعب ،سعید بن جبیر اورسدی آیہ کریمہ کی تلاوت اس طرح کرتے تھے:{فَمَا اسْتَمْتَعْتُم بِہِ مِنہْنَّ ُإلی اجل مسمی فَاتُوہُنَّ أُجُورَہُنَّ فَرِيضَۃ}مجاہد کا کہنا ہے:مذکورہ آیہ متعہ کے بارے میں نازل ہوئی ہے۔7.فخر الدین رازی لکھتے ہیں :مسلمانوں نےابی کعب اور ابن عباس کی قرائت سےانکار نہیں کیا ہے ۔یہاں سےمعلوم ہوتاہے کہ ان دونوں کی قرائت کے صحیح ہونے کے بارے میں تمام مسلمانوں کا اجماع ہے ۔اس کا نتیجہ یہ ہے کہ متعہ کےجائزہونے کے بارے میں بھی مسلمانوں کا اجماع ہے ۔8اہل سنت کے علماء نے یہ ادعا کیا ہے کہ یہ آیہ نسخ ہوئی ہے اور انہوں نے اس سلسلے  میں بعض آیات کے علاوہ صحاح اور مسانید میں منقول احادیث سے استدلال کیاہے ۔بعض افراد نے آیہ کریمہ {وَ الَّذِينَ ہُمْ لِفُرُوجِہِمْ حَافِظُونَ.إِلَّا عَلیَ أَزْوَاجِہِمْ أَوْ مَا مَلَکَتْ أَيْمَانہُمْ فاِنہَّمْ غَيرْ مَلُومِين َ.فَمَنِ ابْتَغَی وَرَاءَ ذَا لک ِفاُوْلَئکَ ہُمُ الْعَادُون}۹{اور جو لوگ اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کرتے ہیں، مگر اپنی بیویوں اورکنیزوں سے پس ان پر ملامت نہیں ہے، جو لوگ اس کے علاوہ کی خواہش کریں وہ حد سے تجاوز کرنے والے ہیں }کو حکم متعہ کےمنسوخ ہونے کی دلیل قرار دیاہے۔وہ کہتے ہیں کہ اس آیت کےمطابق صرف دو طریقوں سے عورتیں مرد پر حلال ہوجاتی ہیں ۔  ایک زوجیت اور دوسرا ملکیت جبکہ اس آیت میں متعہ کا کوئی ذکر نہیں ہوا ہے ۔ متعہ کا ملک یمین نہ ہونا واضح ہے اسی طرح متعہ شادی کی قسم بھی نہیں ہے کیونکہ اس میں شادی  کےاحکام جیسے ارث ،نفقہ اور حق قسم {شب خوابی}نہیں ہیں ۔اس غلط تصور کا جواب یہ ہے کہ

 پہلا: عقد موقت {متعہ}کیفیت  کےلحاظ سے عقد دائمی  جیسا ہے ۔اس قسم کے ازدواج کے شرعی ہونےمیں کوئی انکار نہیں کرتا۔ان دونوں  کےدرمیان بعض احکام مشترک اور بعض احکام ان میں سے ہر  ایک مخصوص ہیں۔

دوسرا:سورۃ مومنون کی آیت مکی آیات میں سے ہے جبکہ عقد موقت پر دلالت کرنےوالی آیت مدنی ہے ۔ مسلمانوں کا اجماع ہےکہ آیۃ متعہ مدینہ میں نازل ہوئی ہے  جبکہ ناسخ کو زمان  کے اعتبار سےمنسوخ کے بعد ہونا چاہیے ۔ یہ بڑی عجیب بات ہے کہ جب ان سےکہا جاتاہے کہ سورۃ مومنون کی اس آیت  نےکنیزوں سے شادی کرنے کے حکم کو کیوں نسخ نہیں کیاہے؟ چنانچہ ارشاد ہوتاہے :{وَ مَن لَّمْ يَسْتَطِعْ مِنکُمْ طَوْلاً أَن يَنکِحَ الْمُحْصَنَاتِ الْمُؤْمِنَاتِ فَمِن مَّا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُم مِّن فَتَيَاتکُمُ الْمُؤْمِنَات}10{اور جس کےپاس اس قدر مالی وسعت نہیں ہے کہ آزاد مومنہ عورتوں سے نکاح کرے تو وہ کنیز مومنہ عورت سے عقد کرے}تو جواب دیتے ہیں کہ سورہ مومنون کی آیت مکی ہےلیکن مذکورہ آیت { جس میں کنیزوں سے شادی کاحکم ہوا ہے }مدنی ہے ۔مکی آیتیں مدنی آیات  کے لئے ناسخ نہیں بن سکتیں ۱۱جبکہ اسی بات کو متعہ کے بارے میں  کہنےسےگریزکرتے ہیں ۔{والذین ہم هلفروجہم حافظون}یہ آیتیں سورہ معارج میں بھی موجود ہیں جبکہ سورہ معارج بھی مکی ہے  ۔

بعض روایات  کےمطابق متعہ کا حکم اضطراری حالات  کے لئے تھالہذا جب اضطرار ی حالات ختم ہوگئے تو متعہ کاحکم بھی منسوخ ہوا ہے ۔ 12جبکہ اضطراری احکام، اضطراری حالتوں کے تابع ہیں  اور اضطراری حالات صرف پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانےسے مخصوص نہیں ہیں جیسے مجبوری کی حالت میں مردار کا گوشت کھانا جائز ہے اور یہ حکم صرف صدر اسلام سے مخصوص نہیں ہے بلکہ آج  بھی اس قسم کی کوئی حالت پیش آجائے تومردارکا گوشت کھانا جائز ہے ۔اس قسم کی روایتوں  کے مقابلے میں اوربھی روایات موجود ہیں جو خلیفہ دوم  کےزمانے تک متعہ کے جائز ہونےپر دلالت کرتی ہیں ۔ عمران بن حصین سےبخاری نےنقل کیا ہے کہ اس نےکہا : آیہ متعہ کتاب خدا میں نازل ہوئی ہے ہم نے بھی رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  کے ساتھ اس پر عمل کیا ۔اس کےحرام ہونے کے بارے میں کوئی دوسری آیت نازل نہیں ہوئی ہے ۔پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نےاپنی وفات تک اس سے منع نہیں فرمایا ۔ اس  کےبعد ایک شخص نے اپنی رائے کی بنا پر اس سلسلے میں حکم صادر کیا ۔13اس قسم کی روایتوں کو مسلم نےچند واسطوں سے جابر بن عبد اللہ انصاری سےنقل کیا ہے۔۱۴متعہ کے منسوخ ہونے پر دلالت کرنے والی روایتیں ایک واقعے کی طرف اشارہ کرتی ہیں لیکن ان روایتوں میں بہت زیادہ ضد و نقیض باتیں ہیں جوان کے جعلی ہونے کو ثابت کرتے ہے۔۱۵ مثلا بعض روایات کے مطابق یہ حکم فتح مکہ کے سال منسوخ ہوا ہے۔بعض کہتے ہیں کہ فتح خیبر کے سال یہ حکم منسوخ ہوا ہے ۔ بعض کہتے ہیں کہ حجۃ الوداع کے موقع پر یہ حکم نسخ ہوا ہے جبکہ بعض کےمطابق جنگ تبوک میں یہ حکم نسخ ہوا ہے۔16ان اقوال کا لازمہ یہ ہے کہ ایک حکم چند سالوں میں متعدد بار مباح اور متعدد بار نسخ ہو اہو۔یہ نہ علم و حکمت خداوندی سے سازگار ہے اور نہ اسلام میں اس قسم کی کوئی روش پہلے سے موجود تھی۔واضح رہےکہ اتنے اختلافات اور تعارض کےہوتےہوئے ان روایات سےایک قطعی حکم کو منسوخ نہیں کیا جا سکتا۔علاوہ ازیں یہ روایتیں دوسری روایتوں سے{جو متعہ کے جائز ہونے پر دلالت کرتی ہیں}تعارض رکھتی ہیں۔ابن عباس کہتے ہیں :{ماکانت المتعۃ الارحمۃ رحم الله بہا امۃ محمد{ص}لو لا نہیہ{یعنی عمر}عنہا ما احتاج إلی الزناء الاشقی}17

متعہ ایک رحمت تھی خدا نے اس کے ذریعے پیغمبر کی امت پر رحمت کی۔اگر عمربن خطاب متعہ سے منع نہ کرتا تو سوائےشقی   کے کسی اور کو زنا کی ضرورت نہ پڑتی ۔اس حدیث کا مفہوم یہ ہےکہ متعہ رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ذریعےمنسوخ نہیں ہوا بلکہ خلیفہ دوم نے اس سےمنع کیا ہے ۔یہ حدیث جابر بن عبد اللہ انصاری سے نقل ہونے والی حدیث کی موٴید ہے ۔

طبری اور ثعلبی آیہ کریمہ{فمااستمتعتم بہ منہن}18کی تفسیرمیں حضرت علی علیہ السلام سے نقل کرتےہیں کہ آپؑ نےفرمایا : {لو لا ان عمرنہی عن المتعۃ مازنی الاشقی}19اگرعمر نےمتعہ سےمنع نہ کیا ہوتاتو شقی کےسوا کوئی زنا نہ کرتا۔اسی بات کو دوسرے ائمہ اہلبیت علیہم السلام نےبھی متواتر طریقوں سےآپؑ سے نقل کیا ہے۔یہ حدیث بھی جابربن عبداللہ انصاری کی حدیث کی موٴید ہے ۔ جناب جابر ابن عبد اللہ انصاری کا بیان ہے :ہم رسول خداؐ کے زمانےمیں بطور مہر مختصر کھجور اورآٹے پر چند دنوں کے لئے متعہ کیا کرتےتھے اوریہ کام ابوبکرکےزمانے تک انجام دیا لیکن عمر نے عمرو بن حریث  کےواقعے کےبعد اس سے منع کردیا۔ 20

6۔خلیفہ دوم کا یہ قول مشہور ہے {متعتان کانتا علی عہد رسول الله{ص}و انا انہی عنہما و اعاقب علیہما: متعۃ الحج و متعۃالنساء}21دو متعے جو رسول خداصلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کےزمانےمیں رائج تھے میں ان سےمنع کرتاہوں اور جو ان کا مرتکب ہو ااسے سزا دوں گا: متعۃ النساء اور حج تمتع۔خلیفہ دوم کے اس قول سے واضح ہو جاتاہے کہ متعہ رسول خداصلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانےمیں منسوخ نہیں ہوا تھابلکہ انہوں نے اپنی طرف سے منع کیا تھا ۔ فریقین کی روایتیں اس بات کی گواہ ہیں کہ یہ حکم منسوخ نہیں ہوا ہے بلکہ خلیفہ دوم نےاس حکم پر عمل کرنے سے روکاہے وہ کہتا ہے :{ایہا الناس ثلاث کن علی عہد رسول الله.انا انہی عنہن و احرمہن و اعاقب علیہن وہی ه متعۃ النساء و متعۃ الحج و حی علی خیرالعمل} اےلوگو:تین چیزیں جو رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانےمیں رائج تھیں میں ان سےمنع کرتا ہوں اور انہیں حرام قراردیتا ہوں ۔ جس کسی کو ان کا مرتکب پاوَں گا اسےسزا دی دوں گا وہ تین چیزیں یہ ہیں :عورتوں سے متعہ کرنا ،حج تمتع اور حی علی خیر العمل۔حیرت انگیز بات یہ ہے کہ پہلے اور تیسرے مسئلے میں خلیفہ کی ممانعت ابھی تک باقی ہے لیکن حج تمتع کوخلیفہ دوم کی مخالفت  کےباوجود مسلمان بجا لاتے ہیں ۔22

عقد موقت کے مخالفین اس بارے میں بہت سےشبہات پیش کرتےہیں جو  عموما نکاح موقت سے آشنائی نہ رکھنےکی وجہ سے ہے۔ ہم یہاں عقد موقت کےسلسلے میں کئےگئے دو اعتراضات کا مختصراجواب دینے کی کوشش کرینگے ۔

1۔شادی کا مقصد ازداجی زندگی اور نسل کو باقی رکھناہے جبکہ یہ ہدف صرف عقد دائمی کےذریعےحاصل ہوتا ہے کیونکہ متعہ یا عقد موقت کرنےکا مقصد صرف جنسی خواہشات کو بجھانا ہے  ۔ 23

جواب:اس میں کوئی شک و شبہ نہیں کہ شادی کرنےکا ایک مقصد نسل کو باقی رکھنا اور ازدواجی زندگی کوقائم کرنا ہے لیکن شادی کرنے کا مقصد
صرف یہی نہیں بلکہ جنسی لذتوں کو جائز طریقے سے پورا کرنا اور معاشرے کو فساد اور برائیوں سے پاک رکھنا بھی شادی کے اہم اغراض میں سے ہے۔لہذا جب عقد دائمی کےلئےراستہ ہموارنہ ہو تو ان اہداف کو حاصل کرنے کا معقول اور جائز طریقہ عقد موقت ہے ۔ علاوہ ازیں بہت سارے افراد تولیدنسل کی خاطر اس قسم کی شادی کرتے ہیں کیونکہ متعہ اور دائمی شادی سےپیدا ہونےوالےبچوں کے احکام مشترک ہیں۔
2۔متعہ عورت کی شرافت و کرامت کے ساتھ منافات رکھتاہے کیونکہ یہ ایک قسم کی جسم فروشی ہے ۔ عورت کی عزت وکرامت اس بات کی اجازت نہیں دیتی کہ وہ کچھ چیزوں کی خاطر اپنے آپ کو ایک اجنبی مرد کے سپرد کرے ۔

جواب:متعہ اوردائمی شادی کے درمیان ماہیت کے لحاظ سے کوئی فرق نہیں ہے ۔جو کچھ عورت مرد سے لیتی ہے وہ مہر ہے۔ان دونوں قسموں میں مرداپنی بیوی سے لذت اٹھانے کا حق رکھتا ہےجس کے مقابلےمیں مردپرعورت کا مہر واجب ہوتا ہے۔عقد موقت اور دائمی کوئی مالی تجارت نہیں بلکہ یہ ایک مقدس عہد وپیمان ہے جو معقول اور جائز طریقے سے شوہر اور بیوی کے درمیان انجام پاتا ہے ۔یہ بات بہت تعجب آور ہے کہ جو لوگ اس قسم کی شادی پر اعتراض کرتے ہیں یہیں افراد اس دور میں جہاں کچھ شیطان صفت افراد اپنے جنسی خواہشات کو پوری کرنے کے لئےعورتوں کو مختلف طریقوں سے شکار کرتے ہیں اور انہیں اپنی جنسی پیاس بجھانے  کا ایک وسیلہ سمجھتے ہیں  اسے  جدید دور کے تہذیب و تمدن  کے طور پر قبول کرتے ہیں ۔یہ کیسےممکن ہے کہ اگرایک عورت اپنی مرضی سے کسی کےساتھ متعہ کرےتو یہ عورت کی شرافت کے خلاف ہو لیکن اگر ایک عورت چند پیسوں کی خاطر کسی لہوو لعب کی محفل میں یا کسی نائٹ کلب میں ہزاروں عیاش مردوں کے سامنےان کی جنسی خواہشات کو ابھارنے کی خاطر ہر قسم کی حرکتیں انجام دے اور چند افرادکے ہاتھوں اس کی عزت لٹ جائے تویہ عورت کی کرامت و شرافت کے خلاف نہ ہو۔ 24

بہت افسوس کی بات ہے کہ بعض مسلمان مردوں اور عورتوں کی طرف سے متعہ جیسےاسلامی احکام کی بے حرمتی ہوئی ہے۔ بعض خود خواہ مردوں اور عورتوں نے اس اہم اسلامی قانون کے فلسفےکو پاوٴں تلے روندتے ہوئے اسے صرف لذت اٹھانے کا وسلیہ قرار دیا ہے جس کی وجہ سے کچھ موقع پرست نادان افراد کو موقع مل گیا تاکہ وہ اسی بہانے سے اس حکم شرعی کو ایک فعل قبیح کےطورپر پیش کریں۔ائمہ اہلبیت علیہم السلام نے اسی لئےشادی شدہ افراد کو متعہ کرنےسےمنع فرمایا اس کے باوجود انہوں نےہمیشہ اس حکم شرعی کی اہمیت کے پیش نظر اہل سنت کے نظریے کی سختی سے مخالفت کی اور اس بارے میں تقیہ اختیار کرنے کو جائز قرار نہیں دیا ۔ امام جعفر صادق علیہ السلام فرماتے ہیں : جن موضوعات میں تقیہ نہیں کروں گا ان میں سے ایک متعہ ہے ۔25

امام موسی کاظم علیہ السلام نے علی بن یقطین کو{ جنہوں نے متعہ کیا تھا }سرزنش کرتے ہوئے فرمایا: تمھیں متعہ کرنے کی کیا ضرورت ہے خدا نے تمہیں اس کام سے بے نیاز کیا ہے ۔ آپ ؑکسی اورمقام پر فرماتےہیں:یہ کام اس شخص کےلئے مناسب ہےجو شادی شدہ ہونے کے باوجود خدا نے اسے اس کام سے بے نیاز نہیں کیا ہے۔جو شخص شادی شدہ  ہے وہ اس وقت متعہ کر سکتا ہے جب اس کی بیوی اس کے پاس نہ ہو یعنی اس تک رسائی نہ ہو۔26

بہر حال جو کچھ واضح ہے وہ یہ کہ شارع کی طرف سے اس شرعی حکم کو صادر ہونےاورائمہ اہلبیت علیہم السلام کا اس مسئلے کے بارے میں رغبت دلانے کا مقصد یہ نہیں کہ چند ہوسران اورشیطان صفت افراد اس کے ذریعے اپنی جنسی لذتیں پوری کریں یا اس کے ذریعے چند سادہ لوح عورتوں اور بےسرپرست بچوں کو مشکلات میں گرفتا ر کریں ۔27


تحریر: محمد لطیف مطہری کچوروی

 

 

حوالہ جات:
۱۔روم،21۔
۲۔نحل،72۔
۳۔نساء،3۔
۴۔نساء،24۔
۵۔مجمع البیان ،ج3ص60۔ ناصر مکارم شیرازی،شیعہ پاسخ می گوید،ص 114 ۔
۶۔وسائل الشیعۃ ،ج14،ابواب المتعۃ،باب1۔
۷۔تفسیر ابن کثیر،ج2، ص244۔
۸۔مفاتیح الغیب،ج10ص52۔
۹۔مومنون ،5 – 7۔معارج،29 – 31۔
۱۰۔نساء،25۔
۱۱۔سید شرف الدین عاملی ،الفصول المہمۃ ،ص75۔
۱۲۔صحیح بخاری ،ج3،ص246۔صحیح مسلم،ج2،ص1027۔
۱۳۔صحیح بخاری،ج6ص27۔
۱۴۔صحیح مسلم،ج2ص1023۔
۱۵۔سید محسن امین ، نقض الوشیعۃ ،ص 303۔شرف الدین عاملی ،مسائل الفقیۃ ،ص69۔ علامہ امینی ،الغدیر،ج6ص225۔،شیخ محمد حسین کاشف الغطاء،اصل الشیعۃ و اصولہا،ص171۔
۱۶۔شرح صحیح مسلم،نووی ،ج9،ص191۔
۱۷۔ابن اثیر،نہایۃ،ج2،ص488۔
۱۸۔نساء،24۔
۱۹۔سیدشرف الدین عاملی،الفصول المہمۃ ،ص79۔
۲۰۔ صحیح مسلم ، ج 2 ،ص131۔
۲۱۔فخر الدین رازی ،مفاتیح الغیب،ج10،ص52۔
۲۲۔ جعفرسبحانی،عقائدامامیہ ،ص367۔
۲۳۔تفسیرالمنار۔
۲۴۔مرتضی مطہری،نظام حقوق زن دراسلام،ص67۔
۲۵۔نظام زن در اسلام،ص82۔
۲۶۔ایضاً،ص82۔
۲۷۔ایضاً۔

Page 6 of 842

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree